امریکہ میں زیر حراست ایرانی سائنسدان کی صورتحال پر تشویش

 تہران، ارنا- ایرانی سائنٹفک سوسائٹی نے کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے اور امریکی جیل میں حفاظتی تدابیر کے عدم نفاذ کے پیش نظر امریکہ میں زیر حراست ایرانی سائنسدان "سیروس عسگری" کی صحت پر تشویش کا اظہار کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق ایرانی شریف یونیورسٹی آف ٹکنالوجی کے پروفیسر ڈاکٹر سیروس عسگری جنہوں نے معدنیاتیات کے میدان میں کافی سائنسی کامیابیاں حاصل کی تھیں، کو امریکہ میں داخل ہونے کے موقع پر پابندیوں کی خلاف ورزی کے بہانے سے گرفتار کیا گیا جہاں انہوں نے ڈاکٹریٹ مکمل کی تھی۔

ایک ایسا الزام جو کچھ مہینوں کے بعد امریکی عدالتوں میں کلیئر کیا گیا لیکن پھر سے ان کو غیر قانونی طور پر موجودگی کے بہانے گرفتار کیا گیا اور کم سے کم صحت کی سہولیات کیساتھ جیل میں ڈال دیا گیا۔

اب کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے اور امریکی جیل میں حفاظتی تدابیر کے عدم نفاذ کے پیش نظر امریکہ میں زیر حراست ایرانی سائنسدان کی صحت کی صورتحال تشویشناک ہے۔

 یہ بات قابل ذکر ہے کہ 59 سالہ ایرانی سانئسدان جو نومبر 2019ء میں اوہائیو یونیورسٹی میں اپنی تعلیمی سرگرمیوں سے متعلق کاروباری راز چوری کرنے کے الزام سے کلیئر قرار دیا گیا تھا، اب تک ویزہ منسوخی کی وجہ سے امریکی امیگریشن ادارے میں نظر بند ہیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 3 =