کرونا وائرس نے امریکی ظالمانہ پابندیوں کی حقیقت پر روشنی ڈالی: ظریف

تہران، ارنا- ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ کرونا وائرس نے ایران مخالف امریکی ظالمانہ پابندیوں پر روشنی ڈالی جنہوں نے معاشی دہشتگردی کی آڑ میں ایرانی قوم کی صحت کو نشانہ بنایا ہے۔

ان خیالات کا اظہار محمد جواد ظریف نے اپنے ٹوئٹر اکاونٹ میں شائع کردہ ایک ویڈیو میں کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ جب خوراک، ادویات اور دیگر ضروری مصنوعات کی رسائی تک کسی قوم کے حق کو چھین لیا جائے تو وہ دیگر ممالک کے مقابلے میں ایک غیر مساوی اور کمزور پوزیشن میں ہے-

ظریف نے کہا کہ ہمیں کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے اپنی سوچ کو بدلنی ہوگی؛ اس مقابلے نے ہمیں اپنی حکمرانی کو جدید بنانے کی ضرورت سیکھائی۔

انہوں نے ایرانی نئے سال اور نوروز کی آمد پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر ہم ملکی اور خارجہ پالیسی اور دونوں اقسام کے مابین تعلقات میں موجود غلط فہمیوں سے چھٹکارا پائیں تو اس وقت نوروز مبارک ہوگی۔

ظریف نے اس بات پر زور دیا کہ پابندیوں کا مقابلہ کرنے کے لئے ہمیں ہر طرح کی "خود بائیکاٹ" کو الوداع کرنا ہوگا اور سفارتکاری کے نئے دور میں قدم اٹھانا ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس مختصر عرصے کے دوران کرونا وائرس کیخلاف ہماری جد و جہد نے ایرانی شہریوں اور اوورسیز ایرانیوں کے درمیان سرحدوں کو ہٹایا۔

ظریف نے کہا کہ اوورسیز ایرانیوں نے کرونا وائرس کے خطرات کو دیکھ کر ایرانی عوام کی صحت کو ساری سرحدوں پر ترجیح دی اور ان کا یہ موقف، ان کے سامنے ہماری ذمہ داریوں کو اور بھاری کر دیا۔

انہوں نے اوورسیز ایرانیوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ دنیا کے کسی بھی کونے میں ہوں گے یہ جان لیں کہ اس صورتحال میں آپ کی وطن کو آپ کی مدد کی ضرورت ہے۔.

ظریف نے کہا کہ امریکہ ایران کیخلاف زیادہ سے زیادہ پابندیاں لگانے کے ذریعے ہمارے ملک کو یک ایسے جزیرے میں تبدیل کرنا چاہتا ہے جو خطرات اور مصائب کے سمندر میں بند ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ لیکن نوروز ہمیں زندگی کی امید دیتا ہے؛ ایران اپنے پاؤں پر کھڑے ہوکر پابندیوں کی جیل کے تالا کو توڑ دیتا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 2 =