ایران مخالف امریکی پابندیاں؛ کوویڈ-19 کی روک تھام شدید مشکلات کا شکار

تہران، ارنا- ڈنمارک میں تعنیات خاتون ایرانی سفیر نے کہا ہے کہ امریکی ظالمانہ پابندیوں کی وجہ سے ایران کو کرونا وائرس کی روک تھام میں شدید مشکلات کا شکار ہے۔

ان خیالات کا اظہار "افسانہ نادی پور" نے ڈینش پولی ٹیکن اخبار میں "کوویڈ-19 کی روک تھام پر ایران مخالف امریکی پابندیوں کے اثرات" کے عنوان کے تحت لکھے گئے ایک آرٹیکل میں کیا۔

انہوں نے اس آرٹیکل میں کہا ہے کہ دنیا میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے بہت سارے ممالک نے اس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے اندرونی اور بین الاقوامی سطح پر اقدامات اٹھائے ہیں۔

نادی پور نے کہا کہ ایک ایسے وقت ہے کہ جب ایران میں صحت کا نگہداشت کا ایک مضبوط اور جدید نظام ہے لیکن اسے امریکی پابندیوں کی وجہ سے کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے میں بہت ساری پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

ایرانی سفیر نے کہا کہ ادویات، طبی سہولیات اور خوارک کے شعبے میں ایران کیخلاف پابندیوں عائد نہ کرنے کے امریکی دعووں کے برعکس ایران کو ادویات اور طبی سازو سامان کی فراہمی اور منتقلی کی راہ میں بہت مشکلات کا سامنا ہے اور اس بات نے کرونا وائرس کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے ایرانی کوششوں کو بُری طرح متاثر کیا ہے۔

 واضح رہے کہ حالیہ دنوں میں بھی  ایرانی وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ کے سربراہ سمیت اپنے ہم منصبوں میں لکھے گئے خط۔وط میں اس بات پر زور دیا ہے کہ کرونا وائرس کی روک تھام میں ایرانی بے پناہ صلاحیتوں کے باوجود امریکی پابندیوں نے ادویات، طبی سہولیات اور انسانہ دوستانہ مصنوعات کی فراہمی میں رکاوٹیں ڈالی ہیں اور اس بات نے سے کویڈ-19 کیخلاف مقابلہ کرنے کی ایرانی کوششوں کو بہت بڑا نقصان پہنچا ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے ان خطوط میں ایرانی عوام کیخلاف امریکی معاشی دہشتگردی کے جلد از جلد خاتمے کی ضرورت پر زو دیتے ہوئے اقوام متحدہ کیجانب سے ایران مخالف امریکی پالیسی کو روکنے میں ایرانی حکومت اور عوام کا ساتھ دینے کی ضرورت پر زور دیا۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی محکمہ صحت کے مطابق اب تک مجموعی طور پر ملک کے اندر14 ہزار 991 افراد کرونا وائرس میں مبتلا ہوگئے ہیں اور ان میں سے 853 افراد کا انتقال ہوگئے ہیں۔

عالمی وبا کرونا وائرس سے 152 ممالک متاثر ہوچکے ہیں جس کے بعد کل کیسز کی تعداد ایک لاکھ 56 ہزار 730 ہوگئی ہے جب کہ دنیا بھر میں اموات کی تعداد 5 ہزار 839 تک پہنچ گئی ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 6 =