ایران اور دیگر ملکوں کے مشترکہ مضامین کی تعداد میں اضافہ

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران اور دیگر ممالک کی جامعات اور پروفیسروں کے مشترکہ مضامین کی تعداد میں قابل قدر اضافہ ہوگیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار ایرانی وزیر برائے سائنس اور ٹیکنالوجی "منصور غلامی" نے اتوار کے روز ایران میں تعینات آسٹریلیا کے سفیر "لیندال ساکس" سے ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر انہوں نے سائنس کے میدان میں آسٹریلیا کی ترقی اور پیشرفت کو سراہتے ہوئے کہا کہ آسٹریلیا کو سائنس کے شعبے میں دنیا میں اچھی پوزیشن حاصل ہے۔

غلامی نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے گزشتہ 15 سالوں کے دوران سائنسی میدان میں خاصی اچھی پیشرفت کی ہے۔

انہوں نے دنیا میں ایرانی جامعات کی اعلی پوزیشن کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ہم حالیہ برسوں میں جامعات میں سائنسی پیداوار کو عملی بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ آسٹریلیا کے کثیر الثقافتی معاشرہ کے پیش نظر ہم فارسی تاریخ، زبان و ادب، عربی زبان و ادب، ایرانی علوم، اسلامی اور ایرانی فلسفہ اور فنون کے کچھ شعبوں میں طلبا کو تعلیم مکمل کرنے کیلئے داخلہ دینے پر تیار ہیں۔

غلامی نے ایران میں موجود 43 سائنس اور ٹیکنالوجی کے پارکوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ان مراکز میں سرگرم ایرانی نوجوان ماہرین اور سائنسدانوں نے مختلف شعبوں میں انتہائی پیشرفت کی ہے اور وہ اپنی سائنسی کامیابیوں کو دیگر ممالک کیساتھ شیئر کرنے پر دلچسبی رکھتے ہیں۔

انہوں نے یورپ، جنوبی آفریقہ اور ایشیا کے ممالک کیساتھ ایران کے مشترکہ تحقیقاتی منصوبوں پر تبصرہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ ایران اور آسٹریلیا کے درمیان سائنسی تعلقات میں مزید اضافہ ہوجائے گا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 1 =