26 فروری، 2020 6:23 PM
Journalist ID: 1917
News Code: 83692589
0 Persons
جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کے 15 ویں اجلاس کا بیان جاری

لندن، ارنا- ویانا میں منعقدہ جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کے 15 ویں اجلاس کا بیان جاری کیا گیا جس میں تمام فریقین نے اس بین الاقوامی معاہدے کے تحفظ پر زور دیا گیا۔

بیان کے مطابق جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کے 15 ویں اجلاس کا 26 فروری کا انعقاد کیا گیا۔

جوہری معاہدے کے اصولوں کے مطابق مشترکہ کمیشن اس معاہدے کے نفاذ کی نگرانی کر رہا ہے۔

اس اجلاس کا یورپی یونین کی اعلی نمائندہ "ہلگا اشمیٹ" کی قیادت میں انعقاد کیا گیا اور اس میں اسلامی جمہوریہ ایران سمیت روس، چین، فرانس، برطانیہ کے نمائندوں نے حصہ لیا تھا۔

 اس اجلاس میں جوہری معاہدے کے وعدوں کی کمی سے متعلق ایرانی اقدامات کا جائزہ لیا گیا اور ساتھ ہی جوہری معاہدے سے امریکی علیحد گی کے اثرات اور پابندیوں کے از سرنو نفاذ کیلئے یورپی فریقین کے خدشات سے متعلق بات چیت  ہوئی۔

اس موقع پر جوہری وعدوں میں کمی سے متعلق ایرانی اقدمات کے حوالے سے سنجیدہ خدشات کا اعلان کیا گیا۔

اس کے علاوہ جوہری معاہدے کے فریقین نے اس بات کی تصدیق کی کہ امریکی پابندیوں کا از سر نفاذ، ایران کیلئے جوہری معاہدے کے مکمل ثمرات سے مستفید ہونے میں رکاوٹیں حائل کر سکتا ہے۔

اجلاس میں شریک تمام ارکین نے جوہری معاہدے کے تحفظ کی ضرورت پر زور دیا گیا۔

اس کے علاوہ فریقین نے انسٹیکس میکنزم کے پہلے ٹرانزکشن سمیت اس میکنزم میں 4 اور یورپی ممالک کی شمولیت پر خوشی کا اظہار کردیا۔

فریقین نے انہوں نے اراک ورکنگ گروپ اور اس کے جوائنٹ چیفس، انگلینڈ اور چین کی اراک  جوہری تنصیبات کو جدید بنانے کی جاری کوششوں کا خیرمقدم کیا۔

انہوں نے فردو جوہری تنصیبات میں حالیہ پیشرفتوں کا نوٹس لیا اور مستحکم ایروٹوپس منصوبے پر عمل درآمد جاری رکھنے کیلئے روس کی اپنی بھر پور حمایت کا اظہار کیا۔

اس اجلاس میں شریک تمام ارکین نے اسلامی جمہوریہ ایران اور چین میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے پیش نظر ان دونوں ممالک کی کوششوں کو سراہتے ہوئے ان سے یکجہتی کا اظہار کردیا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
7 + 5 =