ایران کا مسلم ملکوں کے درمیان سائنسی پیداوار کا 22 فیصد حصہ

تہران، ارنا - نائب وزیر صحت برائے ریسرچ اور امور ٹیکنالوجی نے کہا ہے کہ آج اسلامی جمہوریہ ایران کا مسلم ممالک کے درمیان سائنسی پیداوار میں 22 فیصد حصہ ہے.

یہ بات ڈاکٹر "رضا ملک زادہ" نے پیر کے روز رازی کے نام سے سائنسی فیسٹیول سے خطاب کرتے ہوئے کہی.
انہوں نے ایران کی سائنسی پوزیشن کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے تمام مشکلات بشمول بجٹ کی کمی اور امریکی پابندیوں کے باوجود سائنسی مضامین میں اعلی کامیابیاں حاصل کی ہیں.
ڈاکٹر ملک زادہ نے کہا کہ مشرق وسطی اور شمالی افریقے کے سائنسی پیداوار کا 30 فیصد اسلامی جمہوریہ ایران سے متعلق ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ 2018 کو سائنسی مضامین، حوالہ جات اور کلینیکل میڈیسن میں ایران 16ویں پوزیشن اور 2019 کو ایک درجے کی بہتری کے ساتھ 15ویں پوزیشن پر تھا.
انہوں نے کہا کہ ہمارے ملک کو فارمیسی سے متعلق حوالہ جات میں دنیا کے سب سے بہترین سات ممالک کا شامل کردیا گیا حتی بعض یورپی ممالک سے اعلی پوزیشن پر ہے.
انہوں نے کہا کہ ہم ملک کی دوا سازی ٹیم کی بدولت دنیا کی جدید ترین دوائیوں تک رسائی حاصل کرنے میں کامیاب رہے ، اور ملک کی دواخانوں میں انتہائی سستے قیمتوں کے ساتھ پیش کی جاتی ہیں۔
نائب ایرانی وزیر صحت نے کہا کہ ہم سائنسی اختیارات کی طرف گامزن ہوگئے ہیں اور پچھلے پانچ سالوں میں بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ جرائد میں پانچ ملین کے قریب ایرانی مضامین شائع ہوئے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں قریب 118 ممالک نے ایرانی مضامین وصول کیے یا ان کا حوالہ دیا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 1 =