ایران امریکی فوجی اڈے پر حملے کو اپنے دفاع کا حق سمجھتا ہے: تخت روانچی

نیویارک، ارنا – اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل مندوب نے اس تنظیم کے سیکرٹری جنرل کو لکھے گئے ایک خط میں کہا ہے کہ ایران، عراق میں امریکی فوجی اڈے پر حملے کو اپنے دفاع کا حق سمجھتا ہے.

یہ بات مجید تخت روانچی نے بدھ کے روز انٹونیو گوترش" کے اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے سربراہ کے نام سے ایک مراسلے میں لکھی.

انہوں نے اقوام متحدہ میں انٹونیو گوترش کے ساتھ ایک ملاقات میں بھی جنرل سلیمانی کی شہادت کے لیے امریکہ کے اشتعال انگیز اور بزدلانہ اقدام کے سامنے ایران کے مواقف کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ایران تناؤ کو کم کرنے کے لئے علاقائی ممالک کے ساتھ بات چیت اور تعاون کے لئے تیار ہے۔

انہوں نے داعش کے خاتمے اور دہشتگردی کے ساتھ جنگ میں ایران کے موثر کردار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جنرل سلیمانی ایران اور خطے کا بے مثال ہیرو تھا.

ایرانی مندوب نے کہا کہ جنرل قاسم سلیمانی کی تدفین اور جنازے میں لاکھوں ایرانی شہری کی شرکت سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ ایرانی جنرل کا قتل امریکہ کےسب سے بڑی اسٹریٹجک غلطی تھی.

انہوں نے کہا کہ امریکہ کی جانب سے اقوام متحدہ کے اجلاس کی شرکت کے لیے جواد ظریف کو ویزے جاری نہ کرنے اور ایرانی سفارت کاروں پر ‏عائد کی جانے والی امریکی پابندیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ امریکہ کا یہ اقدام اقوام متحدہ اور امریکہ کے مابین معاہدے کی سنگین خلاف ورزی ہے تو ہم توقع کرتے ہیں کہ اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل امریکہ کے اس اقدام سے نمٹنے کے لئے  جلد از جلد موثر طریقے سے ایک سنجیدہ اقدام اٹھائے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 10 =