جوہری معاہدے پر پانچویں فیصلے کا مطلب اس سے علیحدگی نہیں: ایران

تہران، ارنا - اعلی ایرانی سفارتکار نے کہا ہے کہ جوہری معاہدے کے وعدوں میں کمی لانے سے متعلق ہمارے پانچویں فیصلے کا مطلب اس معاہدے سے علیحدگی نہیں ہے.

یہ بات نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے سیاسی امور عباس عراقچی نے آج تہران میں منعقدہ علاقائی مکالمہ فورم کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی.
انہوں نے جوہری معاہدے میں ایران کے کچھ وعدوں میں کمی کے لیے پانچواں مرحلہ کا حوالہ دیتے ہوئے ایرانی جوہری وعدوں میں کمی لانے سے متعلق پانچواں اور آخری فیصلہ میں ایران یورینیم کی افزودگی، ذخیرہ شدہ یورینیم کی مقدار کے ساتھ اپنی جوہری سرگرمیوں میں کسی حدود کا پابند نہیں ہے.
انہوں نے اس بات سے مراد یہ نہیں ہے کہ ایران عالمی جوہری ایجنسی کے ساتھ باہمی تعاون کو منقطع کرے گا بلکہ ایران بدستور اس عالمی ادارے کے ساتھ اپنے تعاون کو جاری رکھے گا.
انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے خیال میں جوہری سمجھوتے سے امریکہ کی علیحدگی سے اس معاہدے کا توازن درہم برہم کردیا گیا جو اب وعدوں میں کمی کے پانچواں مرحلے سے ایک معقول توازن تک پہنچ گئے ہیں.

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 9 =