جوہری معاہدے پر پانچواں فیصلہ، اپنی سرگرمیوں میں کسی حدود کے پابند نہیں: ایران

تہران، ارنا - حکومت اسلامی جمہوریہ ایران نے جوہری معاہدے میں اپنے وعدوں میں کمی لانے سے متعلق پانچواں اور آخری فیصلہ کرتے ہوئے یہ اعلان کیا ہے کہ اب ایران ورینیم کی افزودگی، ذخیرہ شدہ یورینیم کی مقدار کے ساتھ اپنی جوہری سرگرمیوں میں کسی حدود کا پابند نہیں ہے.

اس بیان کے مطابق، ایران افزودگی کی صلاحیت ، افزودگی کی سطح ، افزودہ مواد ، ترقی اور تحقیق کی مقدار جو 2015 میں دستخط شدہ جامع مشترکہ ایکشن پلان میں طے شدہ ہے، پر پابندیوں کا خاتمہ کرے گا۔
اسلامی جمہوریہ ایران اپنے جوہری وعدوں کی کمی کے پانچویں مرحلے میں سینٹریفیوجز کی تعداد میں آپریشنل پابندیوں کو نظر انداز کرے گا۔
ایران عالمی جوہری ادارے کے ساتھ تعاون پر قائم رہے گا۔
اسلامی جمہوریہ ایران نے اعلان کردیا کہ اگر پابندیاں خاتمہ ہوجائیں اور اپنے مفادات سے فائدہ اٹھائے تو ہم اپنے وعدوں پر واپسی کے لئے تیار ہیں۔
اس کے بعد ، ایران کا جوہری پروگرام مکمل طور پر اس کی تکنیکی ضروریات پر مبنی ہوگا۔
اس بیان کے مطابق، ایرانی جوہری ادارے کو اس سلسلے میں صدر روحانی کے ساتھ ضروری ہم آہنگی کرنا ہوگا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 2 =