ایران کا اقوام متحدہ کو خط، جنرل سلیمانی کی شہادت دہشتگردی قرار

نیو یارک، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران کے مستقل مندوب نے سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ کے نام ایک خصوصی مراسلے میں امریکہ کے ہاتھوں جنرل قاسم سلیمانی کی مظلومانہ شہادت کو دہشتگردی اور مجرمانہ عمل قرار دیا.

یہ بات مجید تخت روانچی نے گزشتہ روز اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل' انٹونیو گوترش' اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے سربراہ کے نام سے ایک خط میں لکھی.

مجید تخت روانچی نے اس خط میں مزید کہا ہے کہ جنرل سلیمانی پر دہشتگردی کے حملے کے تمام نتائج اور اس کے بین الاقوامی اثرات کا ذمہ دار امریکہ ہوگا.
انہوں نے کہا کہ امریکہ کھلی ریاستی دہشتگردی کا مرتکب ہوا یہاں تک کہ خود امریکی صدر نے بھی اس حملے کا حکم دینے کا اعتراف کیا.
انہوں نے مزید بتایا کہ اس اقدام سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ دہشتگردی سے نمٹنے کے لیے امریکہ کا دعوی بالکل کھوکھلاپن ہے اور حقیقت میں امریکہ، دہشتگردوں سے لڑنے والوں کے ساتھ جنگ میں ہے۔
ایرانی سفیر نے کہا کہ بین الاقوامی امن و سلامتی پر امریکہ کے اس خطرناک فوجی مہم جو‏ئی کے سنگین نتا‏ئج کے باوجود اقوام متحدہ کو اپنی ذمہ داری پر عمل کر کے اس وحشیانہ اقدام کی مذمت کرنی ہوگی.
یاد رہے کہ ایرانی پاسداران انقلاب فورس کی القدس بریگیڈ کے ممتاز کمانڈر جنرل "قاسم سلیمانی" جمعہ کے روز علی الصبح بغداد میں دہشت گردی کی کارروائی میں شہید ہوگئے تھے۔
امریکی وزارت دفاع پینٹاگون کے مطابق، ڈونلڈ ٹرمپ نے اس ہوائی حملہ اور جنرل سلیمانی کے قتل کا حکم دیا.
قائد اسلامی انقلاب نے جمعہ کے روز اپنے ایک بیان میں جنرل سلیمانی کی مظلومانہ شہادت پر ایران میں تین روزہ عام سوگ کا اعلان کیا.
ایرانی وزارت خارجہ نے اپنے ایک بیان میں امریکہ کے دہشتگردی اقدام کی مذمت کرتے ہوئے ایک ہنگامی نشست کا انعقاد کیا.
اسلامی جمہوریہ ایران نے تہران میں تعینات سوئٹزرلینڈ کے سفیر جن کا ملک امریکی مفادات کا نگہبان ہے، کو محکمہ خارجہ میں طلب کیا ہے.
ایرانی اعلی قومی سیکوریٹی کونسل کے ترجمان نے کہا کہ آج بروز جمعہ اس کونسل کی ہنگامی نشست میں امریکہ کے وحشیانہ حملے کے نتیجے میں جنرل سلیمانی کی شہادت کا جائزہ لیا جائے گا.
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 6 =