عراق میں ایرانی سفیر نے جنرل سلیمانی کی شہادت پر تفصیلات بتائیں

بغداد، ارنا - ایرانی سفیر نے پاسداران انقلاب کے کمانڈر قدس فورس کی شہادت کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی فورسز نے جنرل قاسم سلیمانی اور ابومہدی المہندس کی گاڑیوں کو میزائل حملوں سے نشانہ بنایا تھا.

یہ بات "ایرج مسجدی" نے جمعہ کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ عراق کے مقامی وقت رات گئے ایک بجے جنرل سلیمانی اور ابومہدی المہندس بغداد ہوائی اڈے سے شہر کے مرکز کی طرف جارہی تھیں، جن کو امریکہ کے میزائل حملوں کا سامنا ہوا.
مسجدی نے کہا کہ اس دہشتگردانہ حملے کے نتیجے میں جنرل سلیمانی اور ابو مہدی المہندس کے علاوہ ان کے دس ساتھیوں بھی شہید ہوگئے.
انہوں نے مزید کہا کہ شہداء کے جسم کی ملک کی منتقلی کے لئے ضروری اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں.
یاد رہے کہ ایرانی پاسداران انقلاب فورس کی القدس بریگیڈ کے ممتاز کمانڈر جنرل "قاسم سلیمانی" جمعہ کے روز علی الصبح بغداد میں دہشت گردی کی کارروائی میں شہید ہوگئے تھے۔
امریکی وزارت دفاع پینٹاگون کے مطابق، ڈونلڈ ٹرمپ نے اس ہوائی حملہ اور جنرل سلیمانی کے قتل کا حکم دیا.
قائد اسلامی انقلاب نے جمعہ کے روز اپنے ایک بیان میں جنرل سلیمانی کی مظلومانہ شہادت پر ایران میں تین روزہ سوگ کا اعلان کیا.
ایرانی وزارت خارجہ نے اپنے ایک بیان میں امریکہ کے دہشتگردی اقدام کی مذمت کرتے ہوئے ایک ہنگامی نشست کا انعقاد کیا.
اسلامی جمہوریہ ایران نے تہران میں تعینات سوئٹزرلینڈ کے سفیر جن کا ملک امریکی مفادات کا نگہبان ہے، کو محکمہ خارجہ میں طلب کیا ہے.
ایرانی اعلی قومی سیکوریٹی کونسل کے ترجمان نے کہا کہ آج بروز جمعہ اس کونسل کی ہنگامی نشست میں امریکہ کے وحشیانہ حملے کے نتیجے میں جنرل سلیمانی کی شہادت کا جائزہ لیا جائے گا.
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 0 =