30 دسمبر، 2019 8:25 PM
Journalist ID: 2392
News Code: 83614416
0 Persons
ایران کی یورپی ٹیکنالوجی پر دستیابی

تہران، ارنا – ایرانی علم و صنعت یونیورسٹی کا میڈیکل انجینئرنگ گروپ نے ریڑھ کی ہڈی اور گردن میں فالج کے شکار مریضوں کے لئے اعصابی مصنوعی اعضاء کے آلے کو تیار کیا ہے۔

یہ بات اس یونیورسٹی کے پروفیسر "عباس عرفانیان" نے پیر کے روز تیار ہونے والے آلے کی رونمائی تقریب میں صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ریڑھ کی ہڈی کے مریضوں کی ایک پریشانی رابطے اور نقل و حرکت کا مسئلہ ہے اور ان مریضوں کو خون کی گردش نہ ہونے کی وجہ سے بھی گردے اور دل کی بیماریوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔
عرفانیان نے کہا کہ اس یونیورسٹی کے محققین کا مقصد ایم ایس ، دماغی بحران اور پارکنسنزم جیسی بیماریوں میں مبتلا ریڑھ کی ہڈی کے مریضوں کو درپیش پریشانیوں کو کم کرنے کے لئے پیراسیلنگ مصنوعی اعضاء تیار کرنا ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ یہ آلہ مریضوں کو پیڈل کا رخ موڑ کر اپنے مفلوج پٹھوں کو تنگ کرکے خون کی گردش کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے اور اس طرح وہ ریڑھ کی ہڈی کی وجہ سے پیدا ہونے والی پریشانیوں کو حل کرنے کے لئے کوشاں ہیں۔
اسلامی جمہوریہ ایران میں 650 ہزار معذور افراد موجود ہیں۔
اس آلہ کی عالمی قیمت 15 سے 20 ہزار ڈالر تک ہے۔ اور ایران میں تیار کردہ آلہ دنیا کی اوسط قیمت کا 40٪ ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
7 + 11 =