برطانوی وزیر اعظم کی مجموعی پالیسی ایران سے تناؤ کی کمی ہے: بعیدی نژاد

لندن، ارنا- برطانیہ میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر کا عقیدہ ہے کہ برطانوی وزیر اعظم "بوریس جانسون" کی مجموعی پالیسی ایرانی کیساتھ تعلقات میں کشیدگی میں کمی لانے کی کوشش ہے۔

ان خیالات کا اظہار "حمید بعیدی نژاد" نے بدھ کے روز ارنا نمائندے کیساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ برطانیہ ایران کو ایک بڑی منڈی کے طور پر دیکھتا ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران کیساتھ تعلقات کے فروغ کا خواہاں ہے۔

بعیدی نژاد نے جوہری معاہدے کے بعد ایران اور برطانیہ کے درمیان اقتصادی تعلقات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ برطانوی وزیر برائے  بین الاقوامی تجارت "لیام فاکس" نے واضح کیا ہے کہ ایران، سوویت یونین دور کے خاتمے کے بعد، عالمی مارکیٹ میں داخل ہونے والی سب سے بڑی منڈی ہے۔

انہوں نے کہا کہ لہذا ہمارا عقیدہ ہے کہ پابندیوں کی وجہ سے رونما ہونے والے مشکلات کے بغیر، برطانیہ، اسلامی جمہوریہ ایران کیساتھ اقتصادی تعلقات کے فروغ پر دلچسبی رکھتا ہے۔

 ایرانی سفیر نے کہا کہ البتہ وہ اس بات کو بھی مد نظر رکھیں گے کہ اسلامی جمہوریہ ایران، گزشتہ سالوں کی طرح صرف ایک درآمد کرنے والا ملک نہیں بلکہ ہم نے ٹیکنالوجی کے بہت سارے شعبوں میں کافی ترقی کی ہے۔

بعیدی نژاد نے مزید کہا کہ ہماری توقع یہ ہے کہ برطانیہ، جوہری معاہدے سے متعلق اپنے کیے گئے وعدوں پر عمل کرے۔

انہوں نے کہا کہ ایک ایسے وقت جب جوہری معاہدے کے دیگر فریقین، اپنے وعدوں پر عمل نہیں کرتے تو اس معاہدے کے تحفظ کیلئے ایران کے پاس جوہری وعدوں میں کمی لانے کا کوئی آپشن موجود نہیں ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 4 =