ایران نے کینسر کی ادویات تیار کرکے 60 لاکھ ڈالر کی بچت کی

تہران، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران نے حالیہ برسوں میں کینسر ادویات کی تیاری میں قابل قدر پیشرفت کی ہے جس سے ملک کو 60 لاکھ ڈالر زرع مبادلے کی بچت ہوئی ہے.

یہ بات ایرانی علم کی بنیاد پر کمپنی "اکسیر نینو سینا" کی منیجر ڈائریکٹر "مہناز قمی" نے صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کینسر ادویات کی تیاری کے ساتھ علاقائی پہلی پوزیشن پر ہے۔
قمی نے کہا کہ ہماری کمپنی نے فی الحال تین کینسر ادویات "سینا دوکسوزم، سینا کورکومین اور سینا آمفولیش" کو تیار کیا جو ضروری لائسنس حاصل کرنے کے بعد ، بڑے پیمانے پر پیداوار تک پہنچ گئی ہے۔
انہوں نے کہا کہ تیار کرنے والی ادویات چین، شام اور قازقستان کو برآمد کی جاتی ہیں جس کی آمدنی ایک ارب ڈالر تھی۔
انہوں نے کہا کہ دوسری دو نئی کینسر ادویات "سینا نومین اور سینا لیو" ضروری لائسنس کو حاصل کرنے کے بعد تیار ہوں گی۔
انہوں نے اس ادویات کی تیاری کے ساتھ زرع مبادلے کی بچت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ملک میں اس دوا کی سالانہ کھپت تقریبا 12 ہزار گلاس ہے جو ہر ایک گلاس 500 ڈالر کی قیمت کے ساتھ ملک میں برآمد کیا جاتا ہے مگر اس کی تیاری کے ساتھ ملک کو 60 لاکھ ڈالر زرع مبادلے کی بچت ہوئی ہے.

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 2 =