ایرانی کا ایشیائی پارلیمانی اسمبلی میں کثیرالجہتی تعاون کے فروغ کا مطالبہ

تہران، ارنا- ایرانی اسپیکر نے ایشیائی پارلیمانی اسمبلی کے رکن ممالک سے" کثیر الجہتی کے فروغ اور تحفظ کیلئے ایشیائی پارلیمانی اسمبلی کے رکن ممالک کے درمیان تعاون" سے متعلق ایرانی پیش کردہ قراراد کے مسودے کی منظوری کا مطالبہ کیا۔

 ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر "علی لاریجانی" نے آج بروز ہفتہ کو ترکی میں منعقدہ ایشیائی پارلیمانی اسمبلی (اے پی اے) کے 12ویں اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے ایشیائی پارلیمانی اسمبلی کی سطح پر کثیرالجہتی تعلقات کی تقویت کی کوشش کی ہے اور اسی سلسلے میں ایران نے حالیہ دنوں میں اصفہان میں سیاسی امور سے متعلق قائمہ کمیٹی کے اجلاس سمیت ترکی کے شہر ریزہ میں منعقدہ ایگزیکٹیو کونسل کے پہلے اجلاس کے موقع پر "کثیر الجہتی کے فروغ اور تحفظ کیلئے ایشیائی پارلیمانی اسمبلی کے رکن ممالک کے درمیان تعاون" کے قرارداد کے مسودے کو پیش کیا گیا ہے۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کردیا کہ رکن ممالک کی پارلیمنٹس، اس قرارداد کو اتفاق رائے سے منظور کرتے ہوئے علاقائی اور حتی عالمی سطح پر افہام و تفہیم، تعاون اور مشترکہ مفاد کے عناصر پر مبنی گفتگو کی حمایت کرنے اور کثیرالجہتی کو پہلے سے کہیں زیادہ فروغ دینے کے راستے پر گامزن ہوجائیں گے۔

لاریجانی نے ایشیائی پارلیمانی اسمبلی کی خاتون سربراہ "گابریلا کئواس بارون" کی پر خلوص کوششوں کا شکریہ ادا کیا۔

ایرانی اسپیکر نے ترک حکومت اور اپنے ترک ہم منصب "مصطفی شنتوب" سے اس اجلاس کے کی میزبانی کیلئے شکریہ ادا کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ اس اجلاس کے انعقاد سے مختلف سیاسی، ثقافتی اور اقتصادی شعبوں میں تعمیری کامیابیاں حاصل ہوں گی۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی اسپیکر نے اس اجلاس کے موقع پر ترکی نیشنل اسمبلی کے اسپیکر کیساتھ ملاقات کی۔

 اس موقع پر انہوں نے ایشیائی پارلیمانی اسمبلی کے 12 ویں اجلاس کی میزبانی کیلئے ترک اسپیکر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ایران اور ترکی، خطے کے دو اہم ملک ہیں اور دونوں ملکوں کے درمیان دوستانہ اور گہرے تعلقات برقرار ہیں جو حکومتوں، عوام اور پارلمینٹوں کے درمیان دیکھائی دیتے ہیں۔

 ایرانی اسپیکر نے کہا کہ وہ اپنے ترک ہم منصب کیساتھ ایک تفصیلی مذاکرات میں باہمی معاشی تعلقات کی توسیع سمیت علاقے اور دنیا کے اہم ترین مسائل پر بات چیت کی ہے۔

لاریجانی نےعلاقے میں پائیدار قیام امن کی فراہمی سے متعلق دونوں ملکوں کے مشترکہ نقطہ نظر پر تبصرہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ ایران اور ترکی کے پارلیمانی تعلقات کا فروغ، دونوں ملکوں کے مفادات کی فراہمی میں موثر ثابت ہوگا۔

اس موقع پر ترکی نیشنل اسمبلی کے اسپیکر نے بھی اپنے ایرانی ہم منصب کیساتھ حالیہ ملاقات کو موثراور تعمیری قرار دیتے ہوئی کہا کہ اس ملاقات میں علاقے کے اہم ترین مسائل کا جائزہ لیا گیا۔

انہوں نے ایرانی پارلمینٹ کے اسپیکر کو دورہ ترکی آنے کا شکریہ ادا کیا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
6 + 1 =