پڑوسی ممالک کو دشنوں کی سازشوں سے خبردار رہنا ہوگا: ایرانی امیرالبحر

تہران، ارنا - ایرانی بحریہ کے سربراہ نے کہا ہے کہ بعض غیرعلاقائی ریاستیں خطے کے خلاف سرگرم ہیں لہذا پڑوسیوں کو چاہئے کہ ایسی سازشوں سے خبردار رہیں.

یہ بات ایڈمیرل "حسین خانزادی" نے منگل کے روز اپنے پاکستانی ہم منصب "ظفر محمود عباسی" کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی.
انہوں نے اس ملاقات کے دوران مزید کہا کہ بیگانے ممالک خطے کی صلاحیتوں کو متاثر کرنے کے درپے ہیں کیونکہ وہ انہیں اپنے مفادات کے لئے نقصان دہ سمجھتے ہیں.
ایڈمیرل خانزادی نے کہا کہ ہم ملکی بحری جہازوں کو پاکستانی بندرگاہوں بھیجنے کے لئے تیار ہیں.
انہوں نے ایرانی آرمی نیوی کی قیادت میں آوینز اجلاس کے انعقاد کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے اس اجلاس میں بھرپور کوششیں کی اور پاکستان کے تعاون بہت ہی موثر تھا اور سمندری سیکورٹی مشق میں پاکستان کی موجودگی کی توقع ہے.
انہوں نے سمندروں کی اہمیت پر زور دیا اور کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان سمندری تعلقات میں صرف تیل کا موضوع اہم نہیں بلکہ خطے کے سیاسی جغرافیہ، مخصوص صلاحیتیں اور کراسنگ کی صلاحیت بہت ہی ضروری ہے۔
ایرانی نیول چیف نے کہا کہ گوادر بندرگاہ چین کو بحیرہ ہند پر منسلک کرکے پاکستان کے لئے اچھی صلاحیتیں فراہم کرتی ہے اور ہماری چابہار بندرگاہ بھی اس کردار ادا کر رہی ہے.
انہوں نے علاقائی سلامتی کی فراہمی کے لئے اجنبیوں کی عدم موجودگی پر زور دیا اور کہا کہ خطی عوام ہوشیار ہیں اور ممالک کے درمیان یکجہتی کا اظہار بڑھ جاتا ہے.
پاکستانی امیرالبحر نے دونوں ممالک کے درمیان مشترکہ مذہبی اور ثقافتی تعلقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران پاک چین سمندری کوریڈور کی اقتصادی صلاحیتوں سے مشرق کو مغرب پر منسلک کرنے کے لئے استعمال کرسکتا ہے.
محمود عباسی نے کہا کہ اس راہداری کا چوراہا چابہار اور گوادر بندرگاہیں ہیں جس کے درمیان دوستانہ تعلقات قائم کرنے کی ضرورت ہے.
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 11 =