7 دسمبر، 2019 5:51 PM
Journalist ID: 1917
News Code: 83584863
0 Persons
ایران اور عمان کا باہمی معاشی تعاون کے فروغ پر زور

تہران، ارنا- سلطنت عمان کے وزیر برائے صنعت اور تجارتی امور نے کہا ہے کہ شمال- جنوب کریڈور نہ صرف دونوں ملکوں کے درمیان برآمدات اور درآمدات کیلئے ایک اچھا موقع فراہم کرتا ہے بلکہ ہمسایہ ممالک کیساتھ تجارتی لین دین کو بھی مزید فروغ دے گا۔

ان خیالات کا اظہار "بن مسعود بن علی السیدی" نے ہفتہ کے روز ایران اورعمان کے درمیان باہمی تعاون سے متعلق منعقدہ 18 ویں مشترکہ اقتصادی کمیشن کے اجلاس کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کردیا کہ سمندری نقل و حمل سے متعلق دونوں ملکوں کے درمیان باہمی تعاون کے ایک معاہدے پر دستخط ہوجائے گا اور ساتھ ساتھ مشترکہ سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کیلئے ایران اورعمان کے درمیان تعمیری مذاکرات کا انعقاد ہوجائے گا۔

بن مسعود بن علی السیدی نے مزید کہا کہ ان کا ملک پیٹروکیمیکل مصنوعات کے شعبے میں کافی ترقی کی ہے اور عمان کے قریب مواقع بازار بھی ان مصنوعات کی برآمدات پر تیار ہیں اور اس حوالے سے آزاد تجارتی علاقے، موثر کردار ادا کرسکتے ہیں۔

عمانی منڈی میں ایرانی پھلوں کا ایک خاص مقام ہے

سلطنت عمان کے وزیر برائے صنعت اور تجارتی امور نے حالیہ سالوں کے دوران، دونوں ملکوں کی بندرگارہوں کے درمیان بحری جہازوں کی نقل و حرکت میں مزید اضافہ دیکھنے میں آیا ہے جن کے ذریعے اعلی معیار برانڈز کے ایرانی پھل براہ راست عمان میں درآمد کیے جاتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ عمان کی منڈی میں ایرانی پھلوں کا ایک خاص مقام ہے اور اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ وہ فصل کے خاص موسم گزرنے کے بعد باہر صارفین کو دستیاب ہوتے ہیں۔

بن مسعود بن علی السیدی نے مزید کہا کہ ایران اور عمان کے درمیان ایک ارب ڈالر کا تجارتی حجم، دونوں ملکوں کی بے پناہ صلاحیتوں کی باوجود غیر قابل قبول ہے۔

 یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی مرکزی بینک کے سربراہ "عبدالناصر ہمتی" نے اپنے انسٹگرام پیچ میں ایک پوسٹ کے ذریعے لکھا ہے کہ ایران اور عمان کے درمیان اچھے سیاسی تعلقات کے تناظر میں دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی تعلقات کیلئے مناسب موقع فراہم کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ حالیہ مہینوں کے دوران، ایران اور عمان کے متعدد سیاسی اور اقتصادی وفدوں نے دونوں ممالک کا دورہ کیا ہے۔

سلطنت عمان کے وزیر خارجہ  "یوسف بن علوی" نے بھی گزشتہ ہفتے کے دوران ایران کا دورہ کیا جہاں انہوں نے اعلی ایرانی حکام سے الگ الگ ملاقاتیں کیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 8 =