ہرمز امن منصوبہ، خطی کشیدگی کو کم کرنے کا مثبت قدم ہے: عراقچی

تہران، ارنا- نائب ایرانی صدر برائے سیاسی امور نے ایران کیجانب سے تجویز کردہ ہرمز امن منصوبے سے متعلق دوسرے ممالک کے تعمیری رویے کو خطی کشیدگی میں کمی لانے کا ایک مثبت قدم قرار دے دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران، اس منصوبے کے نفاذ کیلئے مناسب میکنزم کی فراہمی پر تمام خطی ممالک کیساتھ تعاون پر تیار ہے۔

ان خیالات کا اظہار کویت کے دورے پر آئے ہوئے سید "عباس عراقچی" نے اپنے کویتی ہم منصب "خالد جاراللہ" کیساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ جمہوریہ اسلامی تمام خطی ممالک کیساتھ تعلقات کے فروغ پر تیار ہے۔

 اعلی ایرانی سفارتکار نے مزید کہا کہ خلیج فارس اور آبنائے ہرمز علاقے کے تمام  ممالک اپنے صلاحیتوں کو بروئے کا لانے کے ذریعے خطے کے روشن مستقبل کی جانب گامزن ہوسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کا عقیدہ ہے کہ علاقائی سلامتی کی فراہمی کیلئے تمام خطی ممالک کے درمیان تعاون ناگزیر ہے۔

نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے سیاسی امور نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے نقطہ نظر سے خطی مسائل کا واحد طریقہ مذاکرات ہی ہے۔

عراقچی نے ایرانی صدر مملکت کیجانب سے حالیہ تجویز کردہ ہرمز امن منصوبے کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اس منصوبے کے فریم ورک کے اندر خطی ممالک کے درمیان تعلقات میں مزید اضافہ ہونے سمیت باہمی اور کثیر الجہتی تعاون کے فروغ کیلئے مناسب فضا کی فراہمی ہوجائے گا۔

 انہوں نے ہرمز امن منصوبے سے متعلق دوسرے ممالک کے تعمیری رویے کو خطی کشیدگی میں کمی لانے کا ایک مثبت قدم قرار دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران، اس منصوبے کے نفاذ کیلئے مناسب میکنزم کی فراہمی پر تمام خطی ممالک کیساتھ تعاون پر تیار ہے۔

اعلی ایرانی سفارتکار نے یمنی مسلئے کے حل کیلئے مذاکرات اور سیاسی طریقوں پر زور دیتے ہوئے یمنی فریقین کے درمیان مذاکرات کا خیرمقدم کیا۔

عراقچی نے خطے میں باہمی ڈائیلاگ کے فروغ میں حکومت کویت کی کوششوں اور امیر کویت کے تعمیری کردار کا شکریہ ادا کیا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 12 =