جاپانی وزیر اعظم کا ایران جوہری معاہدے کی حمایت جاری رکھنے پر زور

بیجنگ، ارنا- جاپانی وزیر اعظم نے اعلی ایرانی سفارتکار کیساتھ ایک ملاقات میں اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ ان کا ملک ایران جوہری معاہدے کی حمایت کا سلسلہ جاری رکھے گا اور اس بین الاقوامی معاہدے کے نفاذ کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنے کیلئے کسی بھی کوشش سے دریغ نہیں کرے گا۔

ان خیالات کا اظہار "ابے شنزو" نے منگل کے روز جاپان کے دورے پر آئے ہوئے نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے سیاسی امور سید "عباس عراقچی" کیساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر اعلی ایرانی سفارتکار نے ایرانی صدر مملکت ڈاکٹر "حسن روحانی" کے تحریری پیغام کو جاپانی وزیر اعظم کا حوالہ کرد یا۔

دراین اثنا جاپانی وزیر اعظم نے اپنے حالیہ دورہ ایران کے موقع پر ایرانی صدر اور سپریم لیڈر کیساتھ ملاقاتوں پر اپنی مسرت کا اظہار کرتے ہوئے دونوں ملکوں کے درمیان سیاسی مشاورت کا سلسلہ جاری رکھنے کا خیر مقدم کیا۔

ایران کیخلاف عائد پابندیاں اٹھانے کی صورت میں اپنے وعدوں کا بھرپور نفاذ کریں گے

اعلی ایرانی سفارتکار نے جوہری معاہدے سے متعلق اسلامی جمہوریہ ایران کے موقف کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ایران کیخلاف عائد پابندیاں اٹھانے کی صورت میں ہم اپنے وعدوں کا بھرپور نفاذ کیلئے آمادہ ہیں۔

انہوں نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے حالیہ اجلاس میں صدر مملکت کیجانب سے تجویز کردہ ہرمز امن منصوبے پر تبصرہ کرتے ہوئے خلیج فارس اور آبنائے ہرمز میں قیام امن اور سلامتی کے تحفظ کیلئے تمام خطی ممالک کو ہرمز امن منصوبے اور اتحاد امید میں شمولیت کی دعوت دی۔

عراقچی نے ابے شنزو کے حالیہ دورہ ایران کو دونوں ملکوں کے درمیان باہمی تعاون کا ایک اہم سنگ میل قرار دیتے ہوئے کہا کہ خطے میں جاپان کے مثالی کردار کے تناظر میں ہم ٹوکیو کیساتھ مزید تعاون کیلئے تیار ہیں۔

واضح رہے ایران جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کا اجلاس ماہرین کی سطح پر 6 دسمبر کو ویانا میں منعقد ہوگا اسی تناظر میں اعلی ایرانی سفارتکار نے جاپانی اور چینی حکام کیساتھ مذاکرات کیلئے بیجنگ اور ٹوکیو کا دورہ کیا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 2 =