اغیار کے بغیر علاقائی اتحاد کی تشکیل، خطی سلامتی کو یقینی بنائے گی: ایران

 تہران، ارنا-  ایران کی اعلی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹیری نے سلطنت عمان کے وزیر خارجہ کیساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ اغیار کے بغیرعلاقائی اتحاد کی تشکیل، خطے میں پائیدار قیام سلامتی کی فراہمی میں مددگار ثابت ہوگی۔

ایڈمیرل شمخانی نے پیر کے روز ایران کے دورے پر آئے ہوئے عمانی وزیر خارجہ "یوسف بن علوی" کیساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے، امریکہ کیجانب سے خلیج فارس میں قیام امن کی فراہمی کے بہانے سے بین الاقوامی اتحاد کی ناکام کوششوں کا ذکر کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ صرف وہ اتحاد خطے میں پائیدار امن اور سلامتی کی فراہمی کو یقینی بنائیں گے جن میں اغیار کی مداخلت اور اثر و رسوخ نہ ہو۔

ایڈمیرل شمخانی نے مزید کہا کہ وہ ملک جو ایران اور دیگر ممالک کیساتھ اپنے کیے گئے وعدوں کا نہیں نھبایا تو اس پر بھروسہ بھی نہیں کرسکتا۔

انہوں نے مزید کہا کہ وہ ممالک جنہوں نے خطے میں تناؤ اورعدم تحفظ پیدا کرنے میں سب سے بڑا کردار ادا کیا ہے اور جنگوں کی آگ بھڑکانے اور دہشتگردی کی پھیلاؤ کے ذریعے خطے میں انتشار اور تباہی کا باعث ہوا ہے، وہ کبھی خلیج فارس میں استحکام اور سلامتی کے خواہاں نہیں بلکہ محض اپنے مفادات کی پیروی کرتے ہوئے اس خطے کو لوٹ مار کرتے ہیں۔

ایران کی اعلی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹیری نے کہا کہ یمن میں جنگ کا سلسلہ جاری رکھنے سے بھی خطے میں تسلط پسند طاقتوں اور ان کے آلہ کاروں کی جنگی جنون ظاہر ہوتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس نسل کشی کو جاری رکھنے سے صرف خطے میں امن و سلامتی کے دشمنوں جیسے امریکہ اور اسرائیل کے مفادات کا فراہم کرے گا.

ایڈمیرل شمخانی نے کہا کہ سعودی عرب کو یمنی عوام کی خواست کو تسلیم کرنے کیساتھ خطی امن و سلامتی کو مزید خطرے میں نہیں ڈالنا چاہیے۔

خطی کشیدگی کو کم کرنے کیلئے اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے پر آمادہ ہیں: بن علوی

اس موقع پر سلطنت عمان کے وزیر خارجہ نے دونوں ملکوں کے درمیان باہمی مشاورت کا سلسلہ جاری ر کھنے پر اپنی خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ خطے میں کشیدگی، خلیج فارس کے کسی ملک کے مفادات میں نہیں ہے اور اس کشیدگی میں مزید اضافے کو روکنا ہوگا۔

انہوں نے مختلف علاقائی اور بین الاقوامی مسائل پر دونوں ملکوں کے مشترکہ نقطہ نظر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی اور تجارتی شعبوں میں ایران اور عمان کے تعلقات میں قابل قدر اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

یوسف بن علوی نے کہا خطے میں پائیدار قیام سلامتی کی فراہمی کیلئے خطی ممالک کے درمیان تعاون ناگزیر ہے۔

انہوں نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ان کا ملک خطی کشیدگی کو کم کرنے کیلئے اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے پر آمادہ ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 14 =