ایران کا کیمیائی ہتھیاروں کی روک تھام کے معاہدے کے غیرجانبدرانہ نفاذ کا مطالبہ

تہران، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران نے کیمیائی ہتھیاروں کی روک تھام سے متعلق عالمی کنونشن کے غیرجانبدرانہ اور من و عن نفاذ کا مطالبہ کیا ہے.

نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے قانونی اور بین الاقوامی امور "غلامحسین دہقان" نے جمعرات کے روز کیمیائی ہتھیاروں کی روک تھام کے معاہدے کے رکن ممالک کے 24ویں اجلاس کے موقع پر او پی سی ڈبلیو تنظیم کے سربراہ "فرناندو آریاس" کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
دہقان نے کیمیائی ہتھیاروں کی روک تھام کے معاہدے کے غیرجانبدرانہ نفاذ، پرامن استعمال کے مقصد سے کیمیائی سامان کے تبادلے کے لئے فریقین کی دیانتداری، رکن ممالک کے درمیان تجارتی تعلقات کی رکاوٹوں کو دور کرنے اور ان کے خلاف پابندیاں عائد نہ کرنے پر زور دیا۔
انہوں نے کیمیائی جانبازوں کی ادویات کی فراہمی کے لئے ایران مخالف امریکی معاشی دہشتگردی کے تباہ کن نتائج کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ اقدامات اس عالمی معاہدے کی خلاف ورزی ہے لہذا اس تنظیم کو مناسب اقدام اٹھانا ہوگا۔
تفصیلات کے مطابق کیمیائی ہتھیاروں کے 24 ویں سالانہ کنونشن کے رکن ممالک کی کانفرنس کا پیر سے جمعہ تک ہالینڈ میں انعقاد کیا گیا.
اس کانفرنس میں او پی سی ڈبلیو تنظیم کے 193 رکن ممالک، کیمیاوی ہتھیاروں سے مقابلے کے مختلف طریقوں پر تبادلہ خیال کرتے ہیں.
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 14 =