ایران، پاکستان سے بارٹر ٹریڈ اور مقامی کرنسی میں لیں دین کیلئے آمادہ

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے چیمبر آف کامرس کے سربراہ نے کہا ہے کہ اگر پاکستانی فریق چاہے تو ایران بارٹر سسٹم اور قومی کرنسی کیساتھ باہمی تجارتی لین دین پر تیار ہے۔

ان خیالات کا اظہار "مسعود خوانساری" نے پاکستان میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے نئے سفیر "سید محمد علی حسینی" کیساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے ایران جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی کے بعد پڑوسیوں کیساتھ اقتصادی اور تجارتی تعلقات استوار کرنے پر تہران چیمبر آف کامرس کی بڑھتی ہوئی توجہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے مزید کہا کہ پاکستان میں بھی اچھی صلاحیتیں ہیں۔

خوانساری نے دونوں ملکوں کے درمیان پھیلی ہوئی سرحدوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان، پابندیوں کے دوران زرعی شعبے میں ایران کی ضروریات کو پورا کرسکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یقینا اس مقصد کے حصول کے لئے وزارت زراعت کو رکارٹ بنے والے قوانین کو ختم کرنے کی ضرورت ہے۔

خوانساری نے کہا کہ اس صورت میں نہ صرف ایران کی ضروریات کو پورا کیا جائے گا بلکہ اسمگلنگ کی مقدار بھی کم ہوجائے گی۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے چیمبر آف کامرس کے سربراہ نے اپنے حالیہ دورہ چین پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ چینی فریق نے ایران میں پاور پلانٹ کی تعمیر میں سرمایہ کاری کرنے پر آمادگی ظاہر کی۔ اگر یہ پاور پلانٹس بنائے جاتے ہیں تو ان کی گنجائش ہمسایہ ممالک کو بجلی برآمد کرنے میں استعمال ہوسکتی ہے۔

خوانساری نے ایران اور افغانستان کے مابین صنعتی سرحدی شہر کے قیام کی تجویز کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ایسی طرح کی تجویز بھی ایران اور پاکستان کے درمیان دی گئی ہے جو دونوں ممالک اور تیسری منڈیوں کو درکار سامان کی تیاری، پیداوار اور تبادلے میں بڑی مدد کرسکتا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 1 =