ایران کیخلاف انسانی حقوق کی قرارداد پاس کرنے پر ترجمان دفترخارجہ کا ردعمل

تہران، ارنا - ایرانی دفترخارجہ کے ترجمان نے اقوام متحدہ میں انسانی حقوق سے متعلق نام نہاد قرارداد پاس کئے جانے پر کہا ہے کہ ایران، انسانی حقوق پر عمل درآمد کو قومی سلامتی کے لئے اہم اور اسے شرعی فرض سمجھتا ہے.

ان خیالات کا اظہار سید "عباس موسوی" نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی  تیسری کمیٹی میں انسانی حقوق سے متعلق ایران کیخلاف قرارداد کے رد عمل میں کیا۔

موسوی نے مزید کہا ہے کہ ایران مخالف اس قرارداد کی کوئی حیثیت نہیں اور یہ سراسر دوہرے معیار کی مثال ہے.

ایرانی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے مزید کہا کہ موجودہ دور کے مجرم جو اس قرارد کے حامی بھی ہیں اور وہ انسانیت کیخلاف تمام جرائم بشمول بچوں کے قتل، نقادوں کی کڑی سزا دینے اور آزاد قوموں کیخلاف معاشی دہشتگردی کا ارتکاب کیا ہے، کو انسانی حقوق سے کوئی سرو کار نہیں ہے۔

موسوی نے کہا کہ وہ حکومتیں جن کی انسانی حقوق کی منظم پامالیوں کی ایک لمبی تاریخ ہے اور دنیا بھر کے لوگ، ان کی مداخلت کے تلخ اور حیرت انگیز تجربات کو یاد کرتے ہیں اور آج بھی لوگوں کو ان کے اتحادی کی نہ ختم ہونے والی جنگوں اور آمریت کا شکار ہیں، وہ اس پوزیشن میں نہیں ہیں کہ ایرانی حکومت اور عوام کو انسانی حقوق سے متعلق مشورے دیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 15 =