ایرانی معیشت میں نسبتا استحکام کو واپس آیا ہے

تہران، ارنا – ایرانی مرکزی بینک کے سربراہ نے کہا ہے کہ ٹرمپ کے معاشی جنگ، بینکاری اور تیل پابندیوں کے آغاز سے ایک سال کے بعد ہماری معیشت میں نسبتا استحکام کو واپس آیا ہے.

یہ بات "عبدالناصر ہمتی" نے پیر کے روز اپنے انسٹاگرام پیج میں کہی.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ آج 2019 کے 4 نومبر کو امریکہ کی جانب سے ایرانی تیل کی برآمدات، بینکاری پر پابندیاں اور معاشی جنگ کے آغاز سے ایک سال ہو چکا ہے اس وقت میں ایک سال بعد کی پیش گوئی مشکل اور کسی حد تک پریشان کن تھی۔

ہمتی  نے کہا کہ امریکہ نے زیادہ سے زیادہ دباؤ کی پالیسی کے ساتھ اپنے مقصد جو ایرانی معیشت کی تباہی اور اس ملک کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کرنا تھا، کو حاصل نہ کرلیا.

انہوں نے ایرانی قومی کرنسی ریال کے سامنے ڈالر کی شرح کی کمی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہماری قومی کرنسی میں گزشتہ سال کے مقابلے میں 21 فیصد اضافہ دیکھنے میں آیا ہے.

ایرانی مرکزی بینک کے سربراہ نے کہا کہ اہم معاشی اشارے سمیت نان آئل کی ترقی اور افراط زر میں بہتری آ رہی ہے.

یاد رہے کہ امریکی صدر "ڈونلڈ ٹرمپ" گزشتہ سال کے مئی مہینے میں عالمی جوہری معاہدے سے علیحدہ ہوگیا اور انہوں نے ایران مخالف نئی پابندیاں عائد کی.

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@      

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 4 =