عالمی عدالت امریکی جرائم کا نوٹس لے: ایرانی عدلیہ کے سربراہ

تہران، ارنا- ایران کے چیف جسٹس نے انسانی حقوق کے دعویدار بالخصوص امریکہ کے خلاف مضبوط مقدمہ درج کرنے اور اس کیس کی ایک بین الاقوامی عدالت میں سماعت کئے جانے کا مطالبہ کیا ہے-

ان خیالات کا اظہار علامہ سید "ابراہیم رئیسی" نے اتوار کے روز انسانی حقوق کی اعلی کونسل کے اجلاس کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اگر ابھی ہم انسانی حقوق کے دعویدار اور اسلامی جمہوریہ ایران کے کارنامہ پر نظر ڈالیں تو انسانی حقوق کے دعویدار ممالک بالخصوص امریکہ کیخلاف ایک تفصیلی مقدمہ درج کیا جا سکتا ہے۔

 ایرانی عدلیہ کے سربراہ نے مزید کہا کہ یک ایسا مقدمہ جس میں دنیا کے تمام وکلا، امریکہ اور یورپی ممالک میں انسانیت اور انسانی حقوق  اور نسل پرستی کے خلاف جرائم کی تصدیق کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ مقدمہ درج کرنے کی بات محض ایک بین الاقوامی ٹریبونل میں کی جانی چاہئے اور پھر انکشاف کیا جانا چاہئے کہ دنیا میں انسانی حقوق کی پامالی کرنے والے کون ہیں۔

علامہ رئیسی نے مزید کہا کہ ایرانی مسافر بردار طیارے کو نشانہ بنانا انسانی حقوق کی پامالی کا سب سے واضح مثال ہے اور آج ان کے ہاتھوں سے یمن اور فلسطین اور دنیا کے دیگر مقامات پر ہونے والے بہت سارے جرائم کا سراغ لگایا جاسکتا ہے۔

ایرانی عدلیہ کے سربراہ نے 40 سال پہلے 13 آبان مطابق 4 نومبر کو ایران کے انقلابی طلبہ نے جاسوسی کے اڈے میں تبدیل امریکی سفارتخانے پر قبضہ کیے جانے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ایران میں قائم سابق امریکی سفارتخانہ سامراجی مقاصد کے حصول کے اڈے میں تبدیل ہوچکا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 5 =