ہمسایوں سے تعلقات کا فروغ ایران کی خارجہ پالیسی کا اہم جز ہے: حکومتی ترجمان

تہران، ارنا - ایران کے حکومتی ترجمان نے صدر روحانی کے حالیہ دورہ ترکی اور آستانہ عمل کے سہ فریقی اجلاس میں شرکت کا ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ پڑوسی ملکوں کے ساتھ تعلقات کا فروغ ایرانی خارجہ پالیسی کا اہم جز ہے.

یہ بات علی ربیعی نے پیر کے روز تہران میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے ایرانی صدر کے دورہ ترکی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس دورے سے شامی امن اور استحکام کے قیام اور باہمی سیاسی تعلقات کو مزید مضبوط بنانے میں مدد ملے گی.

انہوں نے مزید بتایا کہ ہم خطے خاص طور پر یمن میں امن اور استحکام کی واپسی کے لیے اقوام متحدہ اور تمام امن پسند ممالک کے ساتھ باہمی تعاون کے لیے مکمل آمادہ ہیں کیونکہ ہمیں اس بات پر یقین ہیں کہ علاقائی بدامنی کسی ملک کے مفاد میں نہیں ہے.

انہوں نے مزید بتایا کہ ایرانی صدر قریب مستقبل میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس کی شرکت کے لیے نیویارک کا دورہ کریں گے اور یہ دورہ مختلف ممالک کے حکام کے درمیان علاقائی اور بین الاقوامی مسائل پر تبادلہ خیال کے لیے ایک سنہری موقع ہوگا.

اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر'حسن روحانی' ایک اعلی سطحی سیاسی اور اقتصادی وفد کی قیادت میں دارالحکومت انقرہ میں منعقدہ سہ فریقی سربراہی اجلاس میں شرکت کرنے کیلئے ترکی کے دورے پر روانہ ہوگئے۔

ترکی میں سہ فریقی سربراہی اجلاس کا 16 ستمبر بروز پیر کو انعقاد کیا جائے گا۔

9410٭274٭٭
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 10 =