امریکہ میں گرفتارایرانی سائنس دان کے اہل خانہ نے ان کی رہائی کا مطالبہ کیا

اصفہان، ارنا – امریکہ میں گرفتارشدہ ایرانی نامور سائنسدان کے اہل خانہ نے ایرانی وزارت خارجہ اور زیر انتطام اداروں سے ان کی رہائی کیلیے ان کی کیس کا جائزہ لینے کا مطالبہ کیا.

یاد رہے کہ 22اکتوبر 2018 کو مسعود سلیمانی ایک پروفیسر اور سٹیم سیل کے محقق کی حیثیت سے امریکہ روانہ ہوگیا مگر ویزا ملنے کے باوجود شکاگو کے ہوائی اڈے پر نامعلوم وجوہات کی بناء پر گرفتار اس کے بعد علاقے جورجیا میں آٹلانٹا "دیتون" جیل میں منتقل کردیا گیا.
نامور ایرانی ریسرچر کے بھائی اور بہن نے گزشتہ روز صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے امریکہ میں مغوی اس نامور ایرانی محقق پروفیسر 'مسعود سلیمانی' کی رہائی کے لیے وزارت خارجہ اور اس کے زیر انتظام اداروں سے مزید کوششوں کا مطالبہ کیا.
ان کے بھائی ' سلیمانی' نے پروفیسر مسعود سلیمانی کی آخرین صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کی جسمانی طبیعت اچھی نہیں ہے اور اب تک انہوں نے تقریبا 15 کلوگرام وزن کم کیا ہے اور بینائی اور نفسیاتی کے لحاظ سے مشکل کا شکار ہوگیا ہے.
9410٭274٭٭
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
7 + 9 =