ایران جوہری معاہدے کے خاتمے پر بات کرنا قبل از وقت ہے: ظریف

تہران، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ جوہری معاہدے ابھی تک برقرار ہے اور یہ ختم نہیں ہوا لہذا اس کے خاتمے پر بات کرنا قبل از وقت ہوگا.

ان خیالات کا اظہار محمد جواد ظریف نے گزشتہ روز روسی ٹی وی رشیا ٹوڈے کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے کیا.
انہوں نے مزید کہا کہ جوہری معاہدہ ابھی زندہ ہے اور اس کے خاتمے پر بات چیت کرنا قبل از وقت ہے لیکن بدقسمتی سے یورپی فریقین نے اپنے وعدوں کی پاسداری نہیں کی.
ایرانی وزیر خارجہ نے پیرس میں جوہری معاہدے پر فرانسیسی حکام اور اپنے نائب 'سید عباس عراقچی' کے درمیان حالیہ ملاقاتوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس مذاکرات کا موضوع جوہری معاہدے پر نظرثانی کرنا نہیں تھا بلکہ جس میں صرف اپنے معاہدوں کے نفاذ کے طریقوں پر بات چیت ہوئی۔
انہوں نے مزید بتایا کہ یورپی باشندوں کو یہ جان لینا چاہئے کہ امریکہ، بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی میں اپنے جارحانہ اقدام کو، جوہری معاہدے میں کبھی نہیں روکے گا.
ظریف نے کہا کہ ہم جوہری معاہدے پر بھروسہ نہیں کرتے ہیں اور اس سمجھوتے کے ساتھ یا اس کے بغیر اپنے مستقبل کی تعمیر کریں گے لیکن ہمیں اس بات پر یقین ہے کہ جوہری معاہدہ ایک اہم کارنامہ ہے جس کو تباہ نہیں کیا جانا چاہیے کیونکہ اس کی تباہی ایران کو نہیں بلکہ سفارتکاری کے لیے ایک سخت دھچکا ہے.
انہوں نے کہا کہ ايران كے پاس متعدد آپشن موجود ہيں، جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی کے بعد ایران میں افراط زر کی کمی کے علاوہ معاشی استحکام اور معاشی نمو میں اضافہ کیا گیا ہے.
ظریف نے مزید بتایا کہ اگر یورپ اپنی کچھ ذمہ داریوں کو پورا کرنے میں ناکام رہے تو ہم سب خاص طور پر امریکہ ہارنے والا ہوں گے.
9410٭274٭٭
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 11 =