27 اگست، 2019 4:13 PM
Journalist ID: 1917
News Code: 83454220
0 Persons
ایران اور جاپان کے وزرائے خارجہ کی ملاقات

بیجنگ۔ اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے منگل کے روز ٹوکیو کے دورے کے موقع پر اپنے جاپانی ہم منصب کیساتھ ملاقات کی۔

"محمد جواد ظریف" منگل کے روز جاپان کے دورے پر پہنچ گئے جہاں انہوں نے اپنے چاپانی ہم منصب "کونو تارو" کیساتھ ملاقات کی۔

اس ملاقات میں دونوں فریقین نے باہمی تعلقات، ایران جوہری معاہدے کی تازہ ترین صورتحال سمیت خطی اور بین الاقوامی مسائل بشمول خلیج فارس اور مشرق وسطی کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔

واضح رہے کہ ایرانی وزیر خارجہ دورہ جاپان سے پہلے چین کا دورہ کیا جہاں انہوں نے اپنے چینی ہم منصب "وانگ یی" کیساتھ ملاقات کی۔

ظریف، جاپان کے سرکاری دورے کے بعد ملائیشیا کا دورہ کریں گے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ چین اور جاپان، ایرانی تیل کے سب سے بڑے برآمد کنندہ ممالک میں سے ہیں۔

جاپان، ایران جوہری معاہدے کی حمایت کا سلسلہ جاری رکھے گا

واضح رہے کہ جاپانی وزیر خارجہ نے ظریف سے ملاقات کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ان کا ملک ایران جوہری معاہدے کی حمایت کا سلسلہ جاری رکھے گا۔

تارنوکو نے مزید کہا کہ انہوں نے اس ملاقات میں اسلامی جمہوریہ ایران سے جوہری معاہدے پر قائم رہنے کا مطالبہ کیا-

جاپانی وزیر خارجہ نے دونوں ملکوں کے درمیان تاریخی اور دوستانہ تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس ملاقات میں دونوں فریقین نے ایران اور امریکہ کے درمیان حالیہ کشیدگی میں کمی لانے کیلئے باہمی مشاورت کا سلسلہ جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ جاپان کا موقف ایران جوہری معاہدے کی حمایت جاری رکھنے کا ہے۔

تارنوکو کا کہنا ہے کہ انہوں نے ظریف کیساتھ ملاقات میں جوہری معاہدے پر بدستور قائم رہنے اور اس بین الاقوامی معاہدے سے متعلق کیے گئے وعدوں کی پچھلے صورتحال پر واپسی کا مطالبہ کیا۔

انہوں نے ایران سے جوہری معاہدے کے خلاف ہر کسی اقدام اٹھانے سے باز رہنے کا مطالبہ بھی کیا۔

جاپانی وزیر خارجہ نے ایران سے خام تیل کی خریداری اور امریکی سمندری فوجی اتحاد میں ممکنہ شمولیت سے متعلق صحافیوں کے سوالات کا جواب نہیں دیا۔

*274**9467
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 0 =