جوہری معاہدے پر فرانسیسی صدر سے تعمیری مذاکرات ہوئے: ظریف

پیرس، ارنا- ایرانی وزیر خارجہ نے فرانسیسی صدر کیساتھ اپنی حالیہ ملاقات کو تعمیری قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ مذاکرات، ایران اور فرانس کے صدور کے درمیان حالیہ ٹیلی فونک رابطوں کے سلسلے میں ہیں۔

ان خیالات کا اظہار "محمد جواد ظریف" نے "ایمانوئیل میکرون" کیساتھ حالیہ ملاقات کے بعد صحافیوں کیساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ چند ہفتوں پہلے ایرانی صدر مملکت ڈاکٹر "حسن روحانی" اور ان کے فرانسیسی ہم منصب نے ٹیلی فونک رابطوں میں ایک دوسرے کیساتھ بات چیت کی۔

ظریف نے مزید کہا کہ فرانس نے ایران کو جوہری معاہدے کے نفاذ کے حوالے کچھ تجاویز پیش کی ہیں اور ہم نے بھی جوہری معاہدے پر من و عن عمل کرنے کے حوالے سے اپنی تجاویز کو پیش کیا ہے۔

انہوں نے فرانسیسی صدر کیساتھ اپنے حالیہ مذاکرات کو تعمیری قرار دیتے ہوئے کہا کہ البتہ یہ سب ایران جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی کے بعد یورپ کیجانب سے اپنے کیے گئے وعدوں پر عمل کرنے سے منسلک ہیں۔

ظریف نے  دنیا کے 7 بڑے صنعتی ممالک کے حالیہ اجلاس پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ جی 7 اجلاس، فرانس اور جوہری معاہدے کے دیگر یورپی اراکین کیلئے گروپ جی 7 کے اراکین کیساتھ جوہری معاہدے کے حوالے سے بات چیت کرنے کا اچھا موقع ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے اسلامی جمہوریہ ایران اور فرانس کے درمیان باہمی مشاورت کا سلسلہ جاری رکھنے پر زور دیا۔

 انہون نے مزید کہا کہ ایران کا موقف واضح ہے اور جوہری معاہدے سے متعلق از سرنو مذاکرات کرنے کی کوئی گنجائش نہیں ہے لیکن ہم بدستور جوہری معاہدے پر عمل درآمد کرنے حوالے سے مذاکرات کرنے پر تیار ہیں۔

واضح رہے کہ محمد جواد ظریف جو فرانس کے دورے پر ہیں، نے، جمعہ کے روز الیزہ محل میں فرانس کے صدر ایمانوئیل میکرون کیساتھ ملاقات کی۔

ایرانی وزیر خارجہ اس ملاقات کے بعد اپنے فرانسیسی ہم منصب "ژان ایو لوردیان" کیساتھ ملاقات کریں گے۔

ان ملاقاتوں میں فریقین، ایران جوہری معاہدے سے متعلق یورپ کے وعدوں کے بارے میں بات چیت کریں گے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی وزیر خارجہ دورہ فرانس سے پہلے فین لینڈ، سویڈن اور ناروے کا دورہ کیا اور ان ممالک کے اعلی حکام کیساتھ الگ الگ ملاقاتیں کیں۔

 **9467
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@ 

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 1 =