امریکہ جان لے وہ خلیج فارس کو غیرمستحکم نہیں کرسکتا: ظریف

اوسلو، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم خلیج فارس کی سلامتی کے لئے ہر ممکن کوشش کریں گے تاہم امریکہ جان لے کہ وہ اس خطے میں بدامنی نہیں پھیلا سکتا۔

ان خیالات کا اظہار "محمد جواد ظریف" نے ناروے کے انسٹی ٹیوٹ برائے بین الاقوامی امور میں جنگ کے خطرات اور خلیج فارس کے مستقبل کے حوالے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارد نمبر 2231 کے مطابق دوسرے ممالک کو ایران کیساتھ اپنے تجارتی تعلقات کو بحال کرنا چاہیے تا ہم امریکہ نے ان ممالک کیخلاف دباؤ کے ذریعے ان کو اس اقدام سے روک دیا ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ امریکی پابندیوں نے ایرانی عوام کا نشانہ بنایا ہے او یہ اپنی نوعیت میں ایک قسم کی معاشی دہشتگردی ہے۔

ظریف نے کہا کہ امریکہ، ایرانی عوام کیخلاف دباؤ ڈالنے کے ذریعے ان کے موقف میں تبدیلی لانے کا خواہاں ہے اور یہ خود معاشی دہشتگردی کے مترداف ہے۔

انہوں نے امریکہ کیجانب سے ایران کی آزاد جہازارنی کو خطرے میں ڈالنے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ان کا دعوی ہے کہ ایرانی آئیل ٹینکر کو یورپی یونین کے قوانین کے تحت حراست میں لیا گیا تھا جبکہ ہیمں علم ہے کہ یورپی یونین کے قوانین ٹرانس باؤنڈری نہیں ہیں۔

 ظریف نے مزید کہا کہ سب کو عالمی قوانین پر چلنا ہوگا اور اگر دیگر ممالک، بین الاقوامی قوانین کا احترام نہ کریں تو دنیا میں افراتفری پھیلے گی.

انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ایک ہزار 500 میلوں کے سواحل کیساتھ خلیج فارس کا سب سے بڑا ساحلی ملک ہے اور آبنائے ہرمز کا آدھا حصہ بھی ایران کے زیر کنٹرول ہے لہذا امریکہ جان لیں کہ وہ خلیج فارس میں عدم استحکام نہیں پھیلا سکتا ہے۔
*274**9467
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 17 =