امریکی اقدامات، خطی مسائل کو مزید پیچیدہ اور خطرناک بنائیں گے: صدر روحانی

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر مملکت نے امیر قطر کیساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ خلیج فارس میں بعض غیر خطی ممالک بالخصوص امریکہ کے اقدامات کا مقصد دنیا کو خطے میں بدامنی پھیلانے کی طرف راغب کرنا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ کے اس طرح کے اقدامات سے خطے کے مسائل اور پیچیدہ اور خطرناک کی شکل اختیار کر لیں گے۔

ڈاکٹر حسن روحانی نے اتوار کی رات امیر قطر "شیخ تمیم بن حمد آل ثانی" کیساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں گفتگو کرتے ہوئے قطری حکومت اور عوام کو عید الاضحی کی آمد پر مبارکباد دی۔

انہوں نے مزید کہا کہ خلیج فارس، آبنائے ہرمز اور بحیرہ عمان میں قیام امن و سلامتی اسلامی جمہوریہ ایران کیلئے انتہائی اہم ہے لہذا ہم اس علاقے میں قیام امن و سلامتی اور خطے کے عوام کے مفادات کی فراہمی کیلئے کسی بھی قسم کی کوشش سے دریغ نہیں کریں گے۔

صدر روحانی نے مزید کہا کہ خلیج فارس میں بعض غیر خطی ممالک بالخصوص امریکہ کے اقدامات کا مقصد دنیا کو خطے میں بدامنی پھیلانے کی طرف راغب کرنا ہے اور اس طرح کے اقدامات، خطے کے مسائل کو اور پیچیدہ اور خطرناک بنادیں گے۔

ایرانی صدر نےکہا کہ خلیج فارس میں قیام امن و سلامتی کی فراہمی کیلئے خلیج فارس کے ساحلی ممالک کے درمیان تعاون ناگزیر ہے۔

انہون نے مزید کہا کہ تاریخ خود گواہ ہے کہ خطے میں اغیار اور غیر خطی ممالک کی موجودگی صرف علاقے میں کشیدگی کو اور بڑھانے کی باعث ہوتی ہے۔

صدر روحانی نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران علاقے میں امن و استحکام کو تقویت دینے کے حوالے سے دوست ہمسایہ ممالک کے ساتھ مذاکرات کا سلسلہ جاری رکھنے پر دلچسبی رکھتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمارا عقیدہ ہے کہ خلیج فارس میں امن کی فراہمی اور کشیدگی میں کمی، سارے ممالک کے مفادات میں ہے ۔

صدر روحانی نے اس امید کا اظہار کردیا کہ امریکہ، اپنے غطط رویے سے واقف ہوکر اس کو پتہ چل جائے کہ اسی طرح کے موقف اپنانے سے کسی کو کچھ حاصل نہیں ہوگا۔

اس موقع پر امیر قطر نے ایرانی حکومت اور عوام کو عیدالاضحی کی آمد پر مبارکباد دیتے ہوئے اسلامی جمہوریہ ایران کیساتھ تعلقات کے فروغ کا خیر مقدم کیا۔

انہوں نے خلیج فارس میں کشیدکی کی کمی کو دنیا اور علاقے کے مفادات میں قرار دیتے ہوئے علاقے میں ایران کے اہم کردار پر زور دیا۔

امیر قطر نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ان کا ملک خطے میں کشیدگی کو کم کرنے کے حوالے سے کسی بھی قسم کی کوشش سے دریغ نہیں کرے گا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ خطے میں قیام امن اور سلامتی، صرف خطی ممالک کے ذریعے فراہم ہوسکتا ہے اور قطر، اسلامی جمہوریہ ایران کیساتھ باہمی تعلقات سمیت علاقائی امن کے فروغ کے حوالے سے تعاون پر تیار ہے۔

**9467
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 16 =