ایران نے امریکی ڈرون کی دراندازی پر احتجاجی خط سلامتی کونسل کو دے دیا

مہاباد، ارنا – اسلامی جمہوریہ ایران نے ملک میں دراندازی کے بعد تباہ کئے جانے والے جاسوس امریکی ڈرون پر باضابطہ احتجاجی مراسلہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے حوالے کردیا ہے.

یہ بات نائب ایرانی وزیرخارجہ برائے قانونی امور "غلام حسین دہقانی" نے گزشتہ روز ارنا نیوز کے نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے مزید کہا کہ امریکی ڈرون کی دراندازی او اسے تباہ کرنے کے بعد دفترخارجہ نے صدر سلامتی کونسل اور سربراہ اقوام متحدہ کو خط لکھا جس میں منشور اقوام متحدہ کی شق 51 کے مطابق ایران نے اپنا احتجاج ریکارڈ کرایا.

انہوں نے کہا کہ احتجاجی مراسلے میں یہ انتباہ بھی کیا گیا کہ اگر آئندہ ایسی دراندازی جاری رہی تو اسلامی جمہوریہ ایران اپنی حدود کی حفاظت کے لئے کسی بھی دراندازی کا بھرپور انداز میں جواب دے گا.

سنیئر ایرانی سفارتکار نے بتایا کہ امریکی حکام کا یہ دعویٰ ہے کہ ان کے جاسوس ڈرون ایرانی حدود میں نہیں تھا، جبکہ امریکہ ایسے دعوے کرنے کی پوزیشن میں نہیں کیونکہ جب ڈرون کا ملبہ نشانہ بننے کے بعد نیچے آیا تو وہ ایران کی حدود میں گرا تھا.

انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے عالمی عدالت انصاف میں بھی یکطرفہ امریکی پابندیوں پر کیس دائر کیا تھا جس کے ردعمل میں عالمی عدالت نے ایران کے خلاف امریکی پابندیوں بالخصوص خوراک اور ادویات سے متعلق پابندیوں کی مذمت کی.

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 5 =