پابندیاں، منشیات کیخلاف جنگ میں ایران کیلئے رکاوٹ بن رہی ہیں

تہران، ارنا - دنیا میں انسداد منشیات کے حوالے سے ایران فرنٹ لائن پر ہے تاہم اس حوالے سے بین الاقوامی ادارے اور ذمہ دار ممالک بجائے اس کے کہ ایران کی معاونت کریں وہ اپنے دہرے معیار سے رکاوٹ بن رہے ہیں.

ایران کو انسداد منشیات کے عمل میں متعدد مسائل کا سامنا ہے جبکہ دوسروں کے دعووں کے باوجود اس شعبے میں وسائل کی کمی بڑا چیلنج ہے.
تاہم ایران ان تمام مسائل کے باوجود منشیات کی اسمگلنگ کو روکنے کے لئے پُرعزم ہے اور اس لعنت سے لڑنے والی فورس کی تمام ضروریات کو پورا کرے گا.
منشیات سے جنگ کرنے والے جانباز ایرانی اہلکار اس پہلوان جیسا ہے کہ اس کے ہاتھ پیر کو باندھ کر اسے میدان میں چھوڑا جاتا ہے اور اسے کہا جاتا ہے کہ اس حالات میں مقابلہ کرو. اس حوالے سے پابندیوں نے ایران کے لئے منشیات کے خلاف جنگ کو مشکل بنادیا ہے.
ایران کی انسداد منشیات فورس کے سربراہ کے مطابق، ایران میں اینٹی نارکوٹکس فورس ایک ذہین اور قابل فورس ہے جو کسی بھی خطرات سے نمٹنے کے لئے اس کی تربیت ہوتی ہے تاہم اس شعبے میں ہمیں بجٹ اور دیگر وسائل کی کمی کا سامنا ہے.

بریگیڈیر جنرل محمد مسعود زاہدیان نے کہا ہے کہ منشیات کے خلاف جنگ میں موجود رکاوٹوں کی اصل وجہ پابندیاں ہیں کیونکہ پابندیوں سے ہمیں اشیائے ضرورت کو مزید مہنگے داموں میں لینا پڑتا ہے.
سازو سامان اور ٹیکنالوجی کے شعبے میں یکطرفہ پابندیوں کی وجہ سے انسداد منشیات کے عمل سست روی کا شکار ہے اور اس صورتحال سے منشیات کے خلاف آپریشنز اور دیگر اقدامات متاثر ہوتے ہیں.
بریگیڈیر جنرل زاہدیان نے یہ خبردار کیا ہے کہ اگر پابندیوں سے ہٹ کر منشیات کا مقابلہ کرنے والی ایرانی فورسز کی معاونت نہ کی جائے تو منشیات کی روک تھام کا عمل متاثر ہوگا جس کا سب سے بڑا نقصان یورپی ممالک کو ہوگا.

آج انسداد منشیات کو ایک عالمی دن قرار دئے جانے کو 32 سال گزر رہے ہیں جبکہ ایران میں ایسے بھی خاندان اب بھی ہیں جہاں بچے اپنے والد کے انتظار میں ہیں مگر ان معصوم بچوں کو یہ نہیں پتہ کہ ان کے والد نے منشیات کے خلاف جنگ میں جام شہادت نوش کیا ہے اور انہوں نے ایشیا سے یورپ اور امریکہ تک انسانی معاشرے کو بچانے کے لئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے.
اس کے علاوہ ایران میں وہ خواتین بھی ہیں جو شوہروں کی شہادت کے بعد بیوہ ہونے کے ساتھ زندگی کے سپنوں میں ان کی راہ تکتے گزار رہی ہیں.
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
6 + 0 =