12 جون، 2019 8:53 AM
Journalist ID: 1312
News Code: 83349801
0 Persons

ٹوکیو سے تہران تک

مرتضی رحمانی موحد
ٹوکیو سے تہران تک

تہران، 12 جون، ارنا – جاپان میں تعینات ایرانی سفیر نے کہا ہے کہ اسلامی انقلاب کی 40ویں کامیابی،دونوں ممالک کے نوے سالہ دوستانہ تعلقات کی سالگرہ کے موقع پر جاپانی وزیر اعظم کے دورہ ایران دوطرفہ تعلقات میں ایک اہم سنگ میل ثابت ہوگا.

ایرانی سفیر "مرتضی رحمانی موحد" نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور جاپان ایشیا کے مغرب اور مشرق میں واقع ہونے کے باوجود ان کے درمیان دیرینہ اور تاریخی تعلقات قائم ہیں.
رحمانی موحد نے کہا کہ دونوں ممالک اور دنیا کی لائبریری اور میوزیم میں ایران اور جاپان کے درمیان پرانے اور دوستانہ تعلقات کے اثرات اور دستاویزات موجود ہیں.
انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان مشترکہ ثقافت، رسم و رواج اور مشترکہ اقدار عالمی میدان میں دوستانہ اور کثیرالجہتی تعلقات بڑھانے کے لئے ایک مناسب موقع فراہم کی گئی ہے.
انہوں نے بتایا کہ ایرانی اور جاپانی قوم دوطرفہ مسائل اور مشکلات کے حل میں کبھی بھی دونوں ممالک کی حکومتوں کے درمیان باہمی تعاون اور مدد کو فراموش نہیں کرے گی.
ایرانی سفیر نے کہا کہ مغربی ایشیا میں اسلامی جمہوریہ ایران کی اسٹریٹجک پوزیشن، معدنی وسائل اور جیواشم ایندھن جو عالمی اور علاقائی تبدیلیوں میں اہم کردار ادا کر رہی ہے، جاپان کے لئے بہت ہی اہم ہے اور جاپان دنیا کے سب سے تیسرے اقتصادی طاقتور ملک کے طور پر ترقی یافتہ ہے، اپنی سائنسی اور ٹیکنالوجی ترقی کی وجہ سے اسلامی جمہوریہ ایران کی خارجہ پالیسی میں مخصوص پوزیشن پر ہے.
ایرانی سفیر نے کہا کہ قائد اسلامی انقلاب اور صدر روحانی کے مواقف مشرق کے ساتھ باہمی تعاون بڑھانا ہے اور اس راستے میں جاپان کے ساتھ کثیرالجہتی تعلقات کو فروغ کے لئے ایران کے سامنے کوئی رکاوٹ موجود نہیں ہے.
رحمانی موحد نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور جاپان کے درمیان خارجہ پالیسی میں بہت اشتراکات موجود ہیں اور دونوں ممالک علاقے اور مشرقی ایشیا میں سلامتی اور استحکام کو جاری رکھنے میں تعمیری کردار ادا کر رہے ہیں.
انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک قانونی حکمرانی، عوام اور انسانی اقدار کا احترام کرنا، سمندروں کی سلامتی کو تحفظ کرنا، دوسرے ممالک کے اندرونی مسائل میں عدم مداخلت، جوہری ہتھیاروں کی پیداواری کو روکنے کے لئے باہمی کوششوں میں ایک مشترکہ سمت میں قدم چل رہے ہیں اسی لئے تہران اور ٹوکیو کے درمیان یہ اشتراکات مختلف باہمی تعلقات کے مواقع کو فراہم کرر ہے ہیں.
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ جاپان اسلامی جمہوریہ ایران کی پالیسی کے اہم شراکت داری ملک ہے اور اس ملک کی جانب سے عالمی جوہری معاہدے کی حمایت، عالمی اور علاقائی مسائل پر مذاکرات اور گفتگو کرنا دونوں ممالک کے درمیان موجودہ تعلقات میں اہم اشاروں میں سے ایک ہے.
انہوں نے گزشتہ پانچ سالوں کے دوران مختلف عالمی اجلاسوں کے موقع پر دونوں ممالک کے حکام کے درمیان آٹھ بار کے لئے ملاقاتوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ 2018 کے دسمبر کو ایرانی اسپیکر "علی لاریجانی" اور گزشتہ مہینے میں ہمارے وزیر خارجہ "محمد جواد ظریف" کے دورہ جاپان دونوں ممالک کے درمیان اعلی سطح پر سیاسی اور پارلیمانی تعلقات کی علامت ہے.
انہوں نے کہا کہ ہم یقین رکھتے ہیں کہ عالمی برادری، ایرانی اور جاپانی قوم شنزو آبے کے دورے ایران کی اہم کامیابیوں کو جلد دیکھیں گے اور دونوں حکام کے مذاکرات کے مثبت نتائج کثیرالجہتی اور دو طرفہ تعلقات کے لئے ایک روشن چراغ ہوگا.
انہوں نے کہا کہ یقینا جاپانی وزیر اعظم کے دورے ایران علاقائی اور عالمی امن اور سیکورٹی پر مثبت اثرات پڑے گا.
ایرانی سفیر نے اللہ تعالی سے دونوں حکومتوں اور عوام کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کیا.
9393**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
8 + 10 =