ایران ایک خوبصورت اور جدید ثقافت رکھنے والا ملک ہے: بھارتی سیاح

تہران، 25مئی، ارنا - بھارت میں پرل اکیڈمی کے ایک عہدیدار نے جو حال ہی میں ایران گئے تھے اپنے اس سیاحتی سفر کے بارے میں کہا ہے کہ ایران ایک خوبصورت اور جدید ثقافت رکھنے والا ملک ہے جس کے عوام کے دلوں میں بہت محبت پائی جاتی ہے.

پرل اکیڈمی ایک بھارتی تعلیمی ادارہ ہے جہاں میڈیا، تجارت اور فیشن ڈیزائنگ سے متعلق انڈر گریجویٹ، گریجویٹ اور ڈپلومہ کے کورسز کروائے جاتے ہیں. ''اوجوال چوہدری'' پرل اکیڈمی کے شعبہ میڈیا اور تعلقات عامہ کے سربراہ ہیں جنہوں نے گزشتہ ماہ ایران کا دورہ کیا.

وہ 12 سال پہلے بھی کسی عالمی کانفرنس میں شرکت کے لئے تہران گئے تھے مگر یہ دورہ صرف پیشہ وارانہ مقاصد کے لئے تھا جس میں کوئی سیر و سیاحت شامل نہیں تھی. انہوں نے بھاتی ویب سائیٹ ڈیلی او کے لئے لکھے گئے اپنے سفرنامہ ایران میں کہا ہے کہ ایران جدید تہذیب اور ثقافت کا ایک مجموعہ ہے جہاں غیر ملکی سیاح لطف اندوز ہوسکتے ہیں.

انہوں نے اپنے مضمون میں کہا کہ نومبر کے آخری ایام میں دوسری مرتبہ ایران جانے کا موقع ملا اور یہ ایسا دورہ ہے جس کی یاد ہمیشہ میرے ذہن و دل میں تازہ رہے گی. بھارتی سیاح نے مزید کہا کہ جب پہلی بار ایران پہنچا تو صرف ہوٹلوں میں ٹھیرا جہاں کانفرنس میں شرکت کی مگر شہر گھومنے کا کوئی موقع نہ ملا لیکن دوسری مرتبہ جب ایران آیا تو دورہ بہت مختلف تھا.

بھارتی سیاح نے کہا کہ تہران کی سب سے پہلی چیز جس میں میری توجہ کو اپنی طرف مبذول کرائی وہ شہر کی صفائی تھی، چاہے کسی بھی وقت اور کسی بھی جگہ پر آپ ہوں شہر ہمیشہ صاف ستھرا نظر آتا ہے. حتی کہ شہر کی رش سے بھری جگہوں جیسے " تہران کا بازار بزرگ" میں بھی فضائی آلودگی، کوڑا کرکٹ، سگریٹ کے بٹ اور پلاسٹک کے تھیلے بہت کم نظر آر رہے تھے۔ شہر کے ہسپتالوں پر بھی جب میری نظر پڑی تو ان کی صفائی سے بہت متاثر ہوا. انہوں نے تہران شہر کی ساخت و انفراسٹرکچر کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ بڑے بڑے ہای وے سے لے کر چھوٹی چھوٹی گلیوں تک سب پر فارسی اور انگریزی میں نام و نشان لگائی گئی ہے.

بھارتی سیاح نے کہا کہ شہر کی عمارتیں اکثر ماحول دوست تدابیر سے بنی ہوئی ہیں اور نئے شہری منصوبوں میں بھی توانائی کی کھپت کو کم کرنے کی بہت کوشش کی کئی ہے. انہوں نے کہا کہ جب "میلاد" ٹاور سے شہر پر نظر ڈالتے ہیں تو سڑکوں اور پلوں کی خاص تعمیر اور شہر کے منفرد انجینئرنگ اور ڈیزائن کو بخوبی دیکھ سکتے ہیں، میلاد ٹاور سے تہران کا شہر مشرق وسطی کے دل میں یورپی شہروں کی طرح نظر آررہا ہے جو پارسی ماحول اور خوبصورت مسجدوں سے مزین کیا گیا ہے.

انہوں نے کہا کہ دلچسب بات یہ ہے کہ تہران کے اکثر سڑکوں کا نام ایران پر مسلط کردہ آٹھ سالہ جنگ کے شہیدوں کے نام پر ہے. چودھری نے کہا کہ تہران میں آپ روایت اور جدیدیت (ماڈرن ازم) کا ایک خوبصورت مجموعہ کو دیکھ سکتے ہیں؛ روایتی کھانا،روایتی کپڑے، لوگوں کی رحم دلی، مہمانوں کی خاطر مدارات، تہذیب و ثقافت اور خاندان کی مرکزیت یہ سب ماڈرن ازم کے ساتھ مل کر اس بات کی نشاندہی کر رہی کہ تہران تبدیلی کی طرف گامزن ہے.

انہوں نے کہا کہ خوبصورت مساجد اور سرسبز پارکوں نے اس شہر کو اور شاندار بنادیا ہے اس کے علاوہ ہر کسی عمارت کے سامنے کئی درخت اور پھولوں سے بھری باغیچہ دیکھنے میں آیا ہے جبکہ پارکوں میں بڑے بڑے کیمپلکس جن میں پول، کلب، شاپنگ مال اور ریسٹورانٹ بھی شامل ہیں، شہر کو منفرد بنا دیا گیا ہے. بھارتی سیاح نے مزید کہا ہے کہ سماجی سرگرمیوں میں خواتین کی موجودگی اور ان کی حفاظت اور امن انتہائی قابل قدر ہے.

انہوں نے کہا کہ ایک دفعہ ایران کے دو اہم سائنسدانوں سمیت تہران یونیورسٹی کی یک محقق خاتون نے مجھے شام کو کھانے کی دعوت دی اور پھر رات کو 12 بجے جب مجھے اپنے ہوٹل پہنچایا خود ٹیکسی کے ذریعے گھر واپس گئی جو اس ملک کی اعلی سیکیورٹی کا مظاہرہ ہے. انہوں نے کہا کہ تہران میں چائے خانے آدھی رات تک کھلے رہتے ہیں اور چائے، کافی سیمت مختصر کھانے پیش کرتے ہیں.

9467*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@


آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 3 =