امریکی پابندیوں نے عالمی ضوابط کو نشانہ بنایا ہے: ظریف

اسلام آباد، 23 مئی، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے خطی مسائل سے متعلق ہمسایوں کے ساتھ مشاورت کو ضروری قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ آج امریکہ نے پابندیوں کے ذریعے بین الاقوامی نظم و ضوابط کو نشانہ بنایا ہوا ہے.

یہ بات «محمد جواد ظریف» نے دورہ پاکستان پہنچے پر «اسلام آباد» میں ارنا نیوز کے نمائندے کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.
اسلام آباد کی نورخان ایئربیس پہنچنے پر پاکستانی دفترخارجہ کے اعلی حکام اور پاکستان میں ایرانی سفیر مہدی ہنردوست ڈاکٹر ظریف اور ان کے وفد کا استقبال کیا.
اس موقع پر انہوں نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ بات واضح ہے کہ اگر دنیا امریکی پابندیوں کا مقابلہ نہ کرے تو وہ خود اس میں پھنس جائے گی.
انہوں نے مزید کہا کہ دنیا کے ممالک بالخصوص پڑوسیوں کو چاہئے کہ عالمی سلامتی اور اپنے مفادات کی خاطر امریکی پابندیوں کا مقابلہ کریں.
محمد جواد ظریف نے بتایا کہ آج ہم دیکھ رہے ہیں کہ کس طرح آمریکا بدمعاشی کے ذریعے ایران اور چین پر پابندیاں لگا رہا ہے لہذا اگر عالمی برادری اس سلسلے کو روکنے میں ناکام رہی تو دنیا کا کنٹرول ان لوگوں کے ہاتھ میں چلا جائے گا جو کسی قانون کی پرواہ نہیں کرتے.
انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے پاکستان کے ساتھ مضبوط اور دیرینہ تعلقات قائم ہیں اور ہم حالیہ خطی صورتحال کے تناظر میں تمام ہمسایہ بالخصوص پاکستان کے ساتھ مشاورت کو ضروری سمجھتے ہیں.
ظریف نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ ہمسایوں کے ساتھ تعلقات کا فروغ ایران کی خارجہ پالیسی کا ایک اہم جز ہے.
ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ چابہار اور گوادر ایک دوسرے کے لئے لازم اور ملزوم ہیں اور ہم اپنے ریلوے نظام کے ذریعے گوادر کو ایران اور وسطی ایشیا حتی کہ ترکی سے جوڑ سکتے ہیں.
ظریف نے مزید کہا کہ اس دورے کے دوران وہ حکومت پاکستان کے لئے چابہار اور گوادر کو جوڑنے کی تجاویز پیش کریں گے.
*9467*274
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 0 =