جوہری معاہدے سے بڑھ کر قومی مفاد عزیز ہے: ایران

تہران، 9 مئی، ارنا - نائب ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم تناؤ نہیں چاہتے تاہم جوہری معاہدہ اتنا عزیز نہیں جتنا ہمارے لئے ایران کا قومی مفاد اہم ہے.

"سید عباس عراقچی" نے قومی نشریاتی ٹیلی ویژن کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ ہمیں جوہری معاہدے سے غیرمعمولی لگاؤ نہیں بلکہ ہمارے لئے قومی مفاد پہلی ترجیح ہے.
انہوں نے بتایا کہ ایران تناؤ یا محاذ آرائی کے حق میں نہیں مگر ملکی مفادات ہمارے لئے عزیز ہیں.
عراقچی نے ایران کی جانب سے جوہری معاہدے کے بعض اقدامات پر جزوی دستبرداری سے متعلق حالیہ فیصلے پر تبصرہ کرتے ہوئے مزید کہا کہ پابندیوں کی تجدید اور ایران کے جوہری پروگرام کو دوبارہ سلامتی کونسل لے جانا ہماری ریڈلائن ہوگی اگر ایسا ہوا تو جوہری معاہدہ ختم ہوگا اور اسلامی جمہوریہ ایران دوسرے فریق کا بھرپور انداز میں جواب دے گا.
انہوں نے کہا کہ ٹرمپ انتظامیہ جوہری معاہدے کو ختم کرنے میں لگی ہوئی ہے، امریکی حکمرانوں کے اوچھے ہتھکنڈوں کے باوجود ایران ان کی چال میں نہیں پھنسا.
سید عباس عراقچی نے مزید کہا کہ امریکہ نے گزشتہ سال ایران کے جوہری کیس کو سلامتی کونسل لے جانے کے لئے چار بار کوشش کی. یورپ جوہری معاہدے کو بچانےکے لئے بڑی سستی سے کام لے رہا ہے.
انہوں نے کہا کہ ایران کا حالیہ فیصلہ نہ تو جوہری معاہدے کی خلاف ورزی ہے نہ اس نکلنے کے مترادف ہے بلکہ ہم نے اس معاہدے کے فریم ورک میں رہتے ہوئے ایرانی قوم کے مفادات کے تحت فیصلہ اٹھایا.
9467*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@