چین کا ایران جوہری معاہدے کے مکمل نفاذ کا مطالبہ

بیجنگ، 8 مئی، ارنا – چینی حکومت نے امریکی خلاف ورزی کے جواب میں ایران کے حالیہ فیصلے کے ردعمل میں جوہری معاہدے کے تمام فریقین سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس کے من و عن نفاذ کو یقینی بنائیں.

ترجمان دفترخارجہ گینگ شوانگ نے بدھ کے روز بیجنگ میں ہفتہ وار پریس بریفنگ کے دوران مزید کہا کہ جوہری معاہدے کے تمام فریقین پر اس معاہدے کی پاسداری کی ذمہ داری عائد ہوتی ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ ایران جوہری معاہدے سے مشرق وسطی میں امن و استحکام کو مضبوط بنانے میں مدد ملی ہے لہذا ہم اس عالمی معاہدے کے تمام فریقین پر زور دیتے ہیں کہ وہ اپنے وعدوں پر قائم رہیں.
چینی ترجمان نے جوہری معاہدے پر شفاف عمل کرنے پر ایران کی کارکردگی کو سراہا اور کہا کہ چین بھی دوسرے فریقین کی طرح اس معاہدے کے تحفظ کے لئے اپنا کردار ادا کرتا رہے گا.
گینگ شوانگ کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے ایران جوہری معاہدہ کی توثیق کی لہذا ہم اس کا شفاف نفاذ چاہتے ہیں.
یاد رہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے امریکہ کی جوہری معاہدے سے غیرقانونی علیحدگی کے جواب میں ہیوی واٹر اور افزودہ یورونیم کی فروخت کو 60 دن کے لئے روکنے کا باضابطہ اعلان کردیا ہے.
صدر مملکت حسن روحانی نے آج اس فیصلے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ امریکی خلاف ورزی کے جواب میں یہ ایران کا پہلا جوابی فیصلہ ہے.
انہوں نے جوہری معاہدے کے فریقین کو خبردار کیا کہ اگر وہ ایرانی کیس کو ایک بار پھر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو بھیجیں تو اس کا بھی ایران بھرپور جواب دے گا جس کی نوعیت کے بارے میں جوہری معاہدے کے فریقین کو دئے گئے مراسلے میں کہا گیا ہے.
9410٭274٭٭
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@