ایرانی تیل کا نعم البدل ممکن نہیں: ترکی

تہران، 3 مئی، ارنا – ترک وزیر خارجہ نے یکطرفہ امریکی پابندیوں کے تناظر میں یہ بات واضح کردی ہے کہ ترکی کے لئے ایرانی تیل کی جگہ کسی اور ذریعہ کی تلاش مشکل ہے.

مولود چاؤش اوغلو نے انقرہ میں پیراگوئے کے وزیر خارجہ کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے مزید کہا کہ ترکی میں قائم تیل ریفائنری ایسی نہیں بنی ہوئی جو کسی بھی ملک کے تیل کو صاف کرسکے.
انہوں نے کہا کہ ایران مخالف امریکی پابندیوں سے تمام ملکوں کو نقصان ہوگا اور ان مشکلات سے کوئی بھی ملک نہیں بچے گا.
ترک وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ قطر اور سلوواکیا کے حالیہ دوروں میں ہم نے یہ دیکھا کہ ان پابندیوں سے کمپنیوں کو کس حد تک مشکلات پیدا ہوتی ہیں.
انہوں نے مزید کہا کہ جرمنی، برطانیہ اور فرانس نے ایران کے ساتھ مشترکہ تجارت کے لئے انسٹیکس میکنزم کا قیام عمل میں لیا اور ہم بھی ایسا ہی کچھ نظام چاہتے ہیں جس کی مدد سے تہران کے ساتھ تجارت جاری رکھیں.
مولود چاؤش اوغلو کا کہنا تھا کہ اگر ہم ایران کے بجائے کسی اور ملک سے اپنی تیل ضروریات کو پورا کریں تو ہماری تیل صاف کرنے والی کمپنیوں کو بھی اس تیل کے معیار کے مطابق نئی ٹیکنالوجی کو استعمال کرنا پڑے گا.
انہوں نے امریکہ سے ایک بار پھر مطالبہ کیا ہے کہ وہ ایران کے خلاف تیل پابندیوں پر نظرثانی کرے.
274**
9393* ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@