یو این قرارداد 2231 کے نفاذ میں امریکی رکاوٹ نقصان دہ ہے: ایران

نیو یارک، 2 مئی، ارنا – اسلامی جمہوریہ ایران نے کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 ہرگز ایرانی میزائل سرگرمیوں کے خلاف نہیں بلکہ اس کے مکمل نفاذ میں امریکہ رکاوٹ بن رہا ہے جس کے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے.

اقوام متحدہ میں ایران کے سفارتی مشن کی جانب سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکہ انتہائی بے شرمی کے ساتھ اقوام متحدہ کے رکن ممالک کو دھمکا رہا ہے کہ وہ قرارداد 2231 پر عمل نہ کریں دوسری صورت میں امریکہ، انھیں سزا دے گا.
بیان کے مطابق، امریکی محکمہ خارجہ کے ایک عہدیدار نے نیو یارک کا دورہ کیا جس کا مقصد سلامتی کونسل کے مستقل اراکین کے ساتھ ملاقات کرنا تھا تا کہ بقول امریکی دعوے، سلامتی کونسل کی قرارداد ایران کی میزائل سرگرمیوں کو محدود کرتی ہے لہذا ایران کو اس پر پابند کرنا ہوگا.
ایرانی سفارتی مشن نے کہا کہ ہم امریکہ کو یہ یا دلانا چاہتے ہیں کہ قرارداد 2231 کو منظور کروانے میں امریکہ بھی شریک تھا جس میں ایران کی جوہری سرگرمیوں کو پُرامن قرار دینے کے علاوہ جوہری معاہدے کو بھی توثیق ملی تھی.
بیان کے مطابق، بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی اب تک 14 مرتبہ جوہری معاہدے سے متعلق ایران کی شفاف کارکردگی کی تصدیق کرچکی ہے.
اسلامی جمہوریہ ایران نے امریکی حکومت پر زور دیا ہے کہ بے بنیاد الزامات پھیلانے اور سلامتی کونسل کا غلط استعمال کرنے کے بجائے عالمی قوانین کی پاسداری پر ذمہ دارانہ رویہ اختیار کرے.
274**9393*
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@