ایران گیس کی برآمدات اور عالمی منڈیوں کی ضروری توانائی کی فراہمی پر تیار

تہران، 24 فروری، ارنا – اسلامی جمہوریہ ایران گیس کے ذخائر کے لحاظ سے دنیا کی دوسری پوزیشن پر ہے اور پارس جنوبی کے منصوبے کی ترقی اور گیس کی پیداواری کی وجہ سے ملکی ضروریات کو پورا کرنے کے علاوہ گیس کی برآمدات اور عالمی منڈیوں کی ضروری توانائی کی فراہمی کے لئے تیار ہے.

ایران آج دن روزانہ 800 ملین میٹر کیوبک سے زائد گیس پیدا کر رہا ہے جو ملکی ضروریات سے اضافہ ہے لہذا پڑوسی ممالک کی ضروریات کو پورا کرسکتا ہے.
اندازہ لگا جا سکتا ہے کہ پارس جنوبی کے سب فیزوں کے افتتاح کے ساتھ ایرانی گیس کی پیداواری کا سطح روزانہ ایک ارب اور 200 ملین میٹرکیوبک تک اضافہ ہوجائے گا اسی لئے گیس کے بڑے گاہک بالخصوص یورپ اور بھارت اسلامی جمہوریہ ایران کے ذریعہ اپنی ضروریات کی فراہمی کے لئے کوشش کر رہے ہیں.
2017 کے آخر میں بریٹیش پٹرولیم کمپنی (BP) کی رپورٹ کے مطابق، روس کے بعد ایرانی گیس کے ذخائر کا حجم 33.200 ٹریلین میٹرکیوبک ہے اور اس ملک دوسری عالمی پوزیشن اور گیس کے ذخائر کے لحاظ سے اس کا حصہ 17.2 فیصد ہے.
امریکہ اور روس کے بعد اسلامی جمہوریہ ایران سالانہ 223 ارب اور 900 ملین میٹر کیوبک گیس کی پیداواری کے ساتھ دنیا کے گیس پیداکرنے والے ممالک کی تیسری پوزیش پر ہے اور اس حوالے سے اس ملک کا حصہ 6.1 فیصد ہے.
ایران اب عالمی سطح پر گیس کی برآمدات کی مارکیٹ میں 1.5 فیصد کا حامل ہے مگر گیس کے عظیم ذخائر اور اپنی اسٹریٹجک پوزیشن کے ساتھ عالمی اور علاقائی منڈیوں میں اپنے حصے کو 10 فیصد تک اضافہ کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے.
ایرانی چھٹے ترقیاتی منصوبے کا ایک مقصد گیس کی برآمدات کو روزانہ 200 ملین میٹر کیوبک پہنچنا ہے البتہ پڑوسی ممالک کو گیس کی برآمدات اس ملک کی اہم ترجیح ہے.
ایران کے اگلے منزل یورپ کو گیس کی برآمدات ہے اور اگر ملکی گیس کی پیداوار میں اضافہ ہوگا تو سالانہ یورپ کو 30 ارب میٹرکیوبک گیس برآمد کی جاتی گی.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@