ایران کیساتھ مکمل باہمی تعاون کو جاری رکھیں گے: روس

ماسکو، 24 فروری، ارنا – روسی وزارت خارجہ کی تر جمان نے کہا ہے کہ ہم اسلامی جمہوریہ ایران کے ساتھ کثیرالجہتی بالخصوص جوہری توانائی شعبے میں مکمل باہمی تعاون کو جاری رکھیں گے.

یہ بات "ماریا زاخارووا" نے جمعہ کے روز اپنی ہفتہ وار پریس کانفرنس میں صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ امریکہ ایران کے ساتھ باہمی تعاون کی وجہ سے روسی کمپنیوں پر دباؤ ڈال رہا ہے.
زاخارووا نے کہا کہ ایران کے ساتھ باہمی تعاون کی وجہ روسی تجارتی شعبے کو ڈرانے کے لئے واشنگٹن کی کوششیں ناقابل قبول اور پریشان کن ہیں.
انہوں نے امریکی غیر سرکاری تنظیم "جوہری ایران کے خلاف اتحاد" کی جانب سے ایران کے ساتھ باہمی تعاون کو منقطع کرنے کے لئے روسی کمپنیوں پر دباؤ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس تنظیم کا اقدامات اور دوسرے ممالک کے مسائل پر مداخلت کرنا ناقابل قبول ہے.
انہوں ںے کہا کہ جوہری ایران کے خلاف اتحاد روسی اقتصادی کمپنیوں کی اسلامی جمہوریہ ایران کے ساتھ باہمی تعلقات کے لئے دھمکی دے رہی ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ ایران کے حوالے سے امریکی موقف موسمیاتی تبدیلی کی طرح مسلسل تبدیل ہوتا ہے. منصوبہ بندی، سرمایہ کاری اور منصوبوں کا نفاذ اہم مسائل ہیں.
روسی ترجمان وزارت خارجہ نے کہا کہ مارک والاس کی قیادت میں جوہری ایران کے خلاف اتحاد روسی کمپنیوں سے ہر دو ہفتوں سے ایرانی شراکت داروں کے ساتھ باہمی تعاون کی رپورٹ پیش کرنے کا مطالبہ کر رہی ہے.
انہوں نے کہا کہ روسی کمپنیوں کو ڈرانے کے لئے امریکہ کے اقدامات بہت ہی ناقابل قبول اور امریکی حکام کے ایران مخالف موقف حقیقت سے دور ہے.
274*9393**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@