پاکستان، مشترکہ سرحدوں کی سلامتی کیلئے سنجیدگی اپنائے: جنرل جعفری

تہران، 16 فروری، ارنا - ایرانی پاسداران اسلامی انقلاب فورس کے کمانڈر نے کہا ہے کہ پاکستان سے توقع کی جاتی ہے کہ دہشتگردوں کے خلاف فیصلہ کن کاروائی اور ایران کے ساتھ مشترکہ سرحدوں کی سلامتی کو مضبوط کرنے کے لئے سنجیدگی سے اقدامات کرے.

یہ بات میجر جنرل ''محمد علی جعفری'' نے ہفتہ کے روز زاہدان کے دہشتگرد حملے میں شہید ہونے والوں کی نماز جنارے کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی.
انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کو دہشتگردوں کی حالیہ سفاکانہ کاروائیوں کا جواب دینا ہوگا جبکہ پاکستان کو ان عناصر کے ٹھیکانوں جو اسلام کے لئے بڑا خطرہ ہیں، باخبر ہے.
جنرل جعفری نے پاکستان پر زور دیا کہ وہ مشترکہ سرحدوں کی سلامتی کو یقینی بنانے کے لئے اپنی ذمہ داری نبھائے.
انہوں نے اس عزم کا اعادہ کہا کہ ایران قطعی طور پر اپنے مظلوم شہیدوں کے خون کا بدلہ لے گا تاہم اگر پاکستان مشترکہ سرحدوں پر سنجیدگی نہ دیکھائے تو ایران، علاقائی اور غیرعلاقائی جاسوسی اداروں کے پالئے ہوئے دہشتگردوں کو سبق سیکھانے کے لئے تیار ہے.
اعلی ایرانی کمانڈر نے مزید کہا کہ پاکستان سے ہماری یہی توقع ہے کہ وہ اپنی سرزمین کو دہشتگردوں کی جانب سے ایرانی سرزمین اور قوم کے خلاف استعمال کرنے کی اجازت نہ دے.
انہوں نے بتایا کہ صدر مملکت اور سربراہ اعلی قومی سلامتی کونسل کے حالیہ بیانات کے مطابق، آج کی صورتحال میں ماضی کے مقابلے میں بہت زیادہ فرق ہے لہذا حکومت پاکستان کو چاہئے کہ انقلاب مخالف عناصر کے خلاف کاروائی کی نوعیت میں تبدیلی لائے.
میجر جنرل محمد علی جعفری نے مزید کہا کہ اگر پاکستان اپنی ذمہ داری پوری نہ کرے تو سرحدی خطرات سے نمٹنے کے حوالے سے عالمی قوانین کے مطابق ایران کو یہ حق حاصل ہے کہ دہشتگردوں کو سبق سیکھانے کے لئے آگے بڑھے.
یاد رہے کہ دہشتگردوں نے گزشتہ بدھ کی رات زاہدان،خاش روڈ پر پاسداران انقلاب کے اہلکاروں کی بس کو کار بم دھماکے کے ذریعے نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں 27 اہلکار شہید اور 13 زخمی ہوئے.
بدنام زمانہ دہشتگرد تنظیم جیش العدل نے اس سفاکانہ کاروائی کی ذمہ داری قبول کی ہے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@