ایران روس تعاون، اسٹریٹجک پارٹنرشپ کی طرف بڑھ رہا ہے: صدر روحانی

تہران، 14 فروری، ارنا - ایرانی صدر نے اپنے روسی ہم منصب کے ساتھ ایک اہم ملاقات میں کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان تعاون، اسٹریٹجک پارٹنرشپ کی سمت میں آگے بڑھ رہا ہے.

ڈاکٹر ''حسن روحانی'' جو شام سے متعلق ایران، روس اور ترکی کے مشترکہ سربراہی اجلاس میں شرکت کے لئے سوچی کے دورے پر ہیں، نے روسی صدر ''ولادیمیر پیوٹن'' کے ساتھ ملاقات کی.
اس موقع پر انہوں نے دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی سرگرمیوں کو مزید بڑھانے کے لئے ایک دوسرے کی مقامی کرنسی کے استعمال پر زور دیا ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ مقامی کرنسی کے استعمال سے ایران روس معاشی تعاون کے فروغ کے لئے ایک اہم سنگ میل ثابت ہوگا.
صدر روحانی نے شام سے متعلق کہا ہے کہ بعض ممالک بالخصوص امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست، شام میں دہشتگرد عناصر کی حمایت کررہے ہیں جو خطے میں دہشتگردی کی اصل وجہ ہے.
انہوں نے اس امید کا اظہار کیا ہے کہ سوچی میں ہونے والا سہ فریقی سربراہی اجلاس خطے میں قیام امن و سلامتی کے لئے مددگار ثابت ہوگا.
ایرانی صدر نے ملک کے توانائی شعبے میں روسی کمپنیوں کی سرمایہ کاری کا بھی خیرمقدم کیا.
انہوں نے ایران جوہری معاہدے کے تحفظ سے متعلق روسی کردار کو اہم قرار دیتے ہوئے مزید کہا کہ یورپی ممالک کو چاہئے کہ جوہری معاہدے کے مکمل نفاذ کو طول دینے کے بغیر یقینی بنائیں.
اس موقع پر روسی صدر نے کہا کہ ان کا ملک ایران جوہری معاہدے کا پوری طاقت سے حمایت کرے گا جبکہ ایسا کوئی شواہد سامنے نہیں جس سے یہ کہا جاسکے کہ ایران، اپنے وعدوں پر عمل نہیں کیا.
انہوں نےشامی بحران کے خاتمے کے لئے ایرانی تعاون کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ آج ایران اور روس اپنے عالمی وعدوں پر قائم ہیں اور ہمیں امید ہے کہ دیگر فریقین بھی اپنے وعدوں پر پابند رہیں گے.
صدر پیوٹن نے زاہدان میں حالیہ دہشتگرد حملے پر ایرانی قوم اور متاثرین کے ساتھ ہمدری کا اظہار کرتے ہوئے ایران کو اسلامی انقلاب کی 40ویں سالگرہ پر بھی مبارکباد پیش کی.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@