دہشتگردی کیخلاف اجتماعی تعاون ناگزیر ہے: ایرانی صدر

تہران، 14 فروری، ارنا - صدر مملکت اسلامی جمہوریہ ایران نے اپنے ترک ہم منصب کے ساتھ ایک ملاقات میں دہشتگردی کو خطے کا ایک اہم چیلنج قرار دیتے ہوئے اس لعنت کے خاتمے کے لئے اجتماعی تعاون کی ضرورت پر زور دیا ہے.

ڈاکٹر ''حسن روحانی'' جو شام سے متعلق ایران، روس اور ترکی کے مشترکہ سربراہی اجلاس میں شرکت کے لئے سوچی کے دورے پر ہیں، نے ترک صدر ''رجب طیب اردوان'' کے ساتھ ملاقات کی.
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ایران اور ترکی دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پختہ عزم کے مالک اور آپس میں تعاون کرتے ہیں.
ایران ترکی تعلقات پر تبصرہ کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ یہ خوشی کی بات ہے کہ حالیہ طے پانے والے معاہدوں پر عمل درآمد کا سلسلہ جاری ہے اور ہمیں امید ہے کہ دیگر معاہدوں کے نافذ کی راہ میں موجود رکاوٹوں کا بھی جلد خاتمہ کردیا جائے گا.
انہوں نے ایران اور ترکی کے درمیان مختلف شعبوں میں تعاون بالخصوص نجی شعبوں کے تعاون پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بینکاری شعبے میں تعاون کی توسیع سے دوطرفہ تعلقات کو مزید فروغ ملے گا.
ایرانی صدر نے کہا ہے کہ ترکی کے ساتھ توانائی، تیل و گیس اور ٹرانسپورٹیشن شعبوں میں مشترکہ تعاون کے فروغ کا خیرمقدم کرتے ہیں.
انہوں نے زاہدان کے دہشتگرد حملے پر یکجہتی کا اظہار کرنے پر ترک صدر کا شکریہ ادا کیا.
اس نشست میں صدر رجب طیب اردوان نے کہا کہ ترک قوم دہشتگردی کا شکار ہے جبکہ ہم خطے میں اس لعنت کے خاتمے کے لئے اسلامی جمہوریہ ایران کے ساتھ مشترکہ تعاون کا سلسلہ جاری رکھیں گے.
انہوں نے یورپ کی جانب سے ایران کے تجارت کو جاری رکھنے کے لئے نئے مالیاتی نظام انسٹیکس کا خیرمقدم کیا.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@