امریکہ مسلمان اور سیاہ فام شہریوں کو نشانہ بنارہا ہے: مرضیہ ہاشمی

تہران، 3 فروری، ارنا - خاتون ایرانی صحافی "مرضیہ ہاشمی" نے امریکی جیلوں سے رہائی کے بعد کہا ہے کہ امریکہ اور بعض مغربی ممالک اپنی منظم یافتہ اسلام مخالف اور نسل پرستی پالیسیوں کے ساتھ مسلمانوں اور سیاہ فام شہریوں کو نشانہ بنا رہے ہیں.

ایرانی انگریزی چینل 'پریس ٹی وی' کی اینکرپرسن ''مرضیہ ہاشمی'' نے 13 جنوری اپنے علیل بھائی کی عیادت اور ایک دستاویزی پروگرام بنانے کے لئے امریکہ کا دورہ کیا مگر ان کو کوئی الزام کے بغیر سینٹ لوئس لبرٹ بین الاقوامی ایئر پورٹ پر گرفتار کرلیا گیا.
خاتون ایرانی صحافی کو 11 دن امریکی جیل میں قید رہنے کے بعد رہا کردیا گیا ہے اور وہ 30 جنوری ایرانی دارالحکومت تہران واپس آگئی.
مرضیہ ہاشمی نے اپنے ایک بیان میں ایرانی حکام اور قوم کی جانب سے ان کی رہائی کی کوششوں کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ اس 11 دنوں کے دوران اہلکاروں نے جیل میں منتقلی تک مجھے ناروا سلوک کیا جبکہ اپنے سر سے حجاب بھی اتارا گیا.
انہوں نے کہا کہ یہ اقدام مسلمانوں اور سیاہ فام شہریوں پر دباؤ ڈالنے کے لئے امریکی کاروائی کا ایک حصہ تھا۔ میں ایک بے گناہ شخص تھی جو مجھے کوئی الزام کے بغیر گرفتار کیا گیا.
انہوں نے اسلامی انقلاب کی 40ویں سالگرہ پر مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ ہم اسلامی انقلاب کی حامی اور طرفدار ہیں اور ہمارا خاوند ایک ایرانی شہری ہے اسی وجہ سے دین اسلام سے واقف ہوں اور یہ باعث فخر ہے.
ایرانی انگریزی چینل 'پریس ٹی وی' کی اینکرپرسن نے کہا کہ امریکہ کے ایسے نسل پرستی اور متعصبانہ رویے کا مقصد ایران فوبیا کو پھیلنا ہے لہذا اس مسائل کی مبنی پر اگر کسی بھی سیاہ فام اور مسلمان شہری اسلامی جمہوریہ ایران کی حمایت کرے تو وہ امریکی دباؤ کا شکار ہوجائے گا.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@