امریکی پابندیاں ایران کے عالمی تعلقات پر اثرانداز نہیں ہوں گی

تہران،2 فروری،ارنا- ایرانی صدر نے کہا ہے کہ امریکہ کی غلط پالیسیاں زیادہ مدت نہیں چلنے والی اور نہ ہی ان سے ایران کے عالمی تعلقات متاثر ہوں گے.

یہ بات "حسن روحانی" نے ایران میں تعینات کروشیا کے نئے سفیر "دراگا اشتانبوگ" کے ساتھ ایک ملاقات میں کہی۔ اس موقع پر کروشین سفیر نے اپنی اسناد تقرری پیش کیں۔
انہوں نے ایران یورپ کے تجارتی لین دین کے حوالے سے یورپی یونین کی جانب سے نہایت دیر سے اٹھائے جانے والے پہلے قدم پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ یقینا ہمیں یورپ کی جانب سے امریکہ کے بغیر مستقل طور پر فیصلہ کرنے سے بہت خوش ہیں۔
صدر روحانی نے مزید کہا کہ آج وائٹ ہاوس میں ایسے حکام بر سراقتدار ہیں جو اپنے ملک کے حساس اداروں کے اہم اہلکاروں کو بھی تسلیم نہیں کرتے ہیں۔
انہوں نے ایران اور کروشیا کے درمیان تاریخی اور ثقافتی تعلقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کروشیا کے ساتھ قریبی تعلقات کا خواہاں ہے۔
ایرانی صدر نےایران مخالف امریکی پابندیوں پرتبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ آج عالمی برادری امریکہ کے اس اقدام کو مذمت کرتے ہیں اور ہم یقینا مشکل کے اس حالات سے عبور کرتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ہمارا یقین ہے کہ امریکی پابندیاں سب سے زیادہ دنیا کے ان ممالک اور کمپنیوں پر برے اثرات مرتب کریں گی جنہوں نے ایک دوسرے کے ساتھ مضبوط تعلقات قائم کرنے کا ارادہ کیا ہے لیکن امریکی پابندیوں نے ان کے درمیان تعاون کی راہ میں رکاوٹیں ڈال دی ہیں۔
صدر روحانی نے ایران اور کروشیا کے درمیان تعلقات کے فروغ پر زور دیتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک توانائی اور مالیاتی شعبوں میں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرسکتے ہیں۔
اس موقع پر کروشین سفیر نے بھی ایران یورپ مالیاتی میکنزم کے باضابطہ اجرا پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یورپ کا اس اقدام، ایران اور کروشیا کے درمیان تعلقات کی توسیع میں معاون ثابت ہوگا۔
انہوں نے کہا کہ کروشیا ایران کے ساتھ تعلقات کے فروغ میں کسی بھی کوشش سے دریغ نہیں کرے گا۔
9467*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@