ایران اور یورپ کے تجارتی تعلقات جوہری معاہدے کی تمام مصنوعات پر شامل ہونا چاہئیے

تہران، 26 جنوری، ارنا - ایرانی ٹریڈ ڈویلپمنٹ آرگنائزیشن کے سربراہ نے کہا ہے کہ سوئٹزرلینڈ اور یورپی یونین کی جانب سے مخصوص مالیاتی نظام انسانی بنیادوں پر امداد جیسی ادویات پر شامل ہیں اور اسلامی جمہوریہ ایران کی دیانتداری کی وجہ سے یورپ کے مالیاتی نظام کو جوہری معاہدے میں تمام منظور شدہ مصنوعات پر شامل ہونا چاہیئے.

یہ بات "محمدرضا مودودی" نے ہفتہ کے روز ایک پریس کانفرنس میں خطاب کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے ایران میں تعینات سوئس سفیر کے ساتھ حالیہ ملاقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے یورپ کے مالیاتی نظام پر انسانی بنیادوں پر امداد کی شمولیت پر زور دیا.
مودودی نے یورپ کی جانب سے مخصوص مالیاتی نظام کے قیام کی کوششوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکی دباؤ یورپ کے لئے ایک بڑا خطرہ ہے اگر امریکہ اپنے مقاصد کو حاصل کرے تو عالمی تجارت ایک بڑے چیلنج کا شکار ہوجائے گا.
یاد رہے کہ گزشتہ سال مئی میں ایران جوہری معاہدے سے امریکہ کی غیرقانونی علیحدگی کے بعد، یورپی یونین نے اس کے خلاف مؤقف اپنایا اور اس نے ایران کے ساتھ تجارت کو جاری رکھنے کے لئے موثر طریقہ اپنانے کا اعلان کر رکھا.
مخصوص مالیاتی میکنزم کے تحت جسے مختصر حرفوں میں SPV کہا جاتا ہے، ایران کے مرکزی بینک اور یورپی ممالک کے درمیان براہ راست تعاون قائم ہوگا جس کی مدد سے بینکاری اور تجارت سے متعلق مشترکہ سرگرمیوں کو ضمانت ملے گی.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@