جاپان اور جنوبی کوریا، ایران سے دوبارہ تیل خریدنے کےدرپے ہیں

بیجنگ، 15 جنوری، ارنا- ایران سے متعلق امریکی پابندیوں سے چھوٹ ملنے کے بعد اب جنوبی کوریا اور جاپان، اسلامی جمہوریہ ایران سے تیل کی خریداری کا ازسرنو آغاز کرنے کیلئے تیار ہیں۔

جنوبی کوریا اور جاپان جو ایرانی تیل کے سے بڑے خریدار ممالک ہیں نے امریکی دباؤ کی بدولت کچھ عرصے کیلئے ایران سے تیل خریدنے کو روک دیا لیکن اب امریکی پابندیوں سے استثنی ملنے کے بعد،پھر دوبارہ اسلامی جمہوریہ ایران سے تیل کی خریداری کا آغاز کریں گے۔
رپورٹ کے مطابق،جنوبی کوریا اور جاپان، جنوری کے آخر یا فروری کے ابتدا میں ایران سے دوبارہ تیل خریدنے کا آغاز کریں گے۔
رائٹرز نیورایجنسی نے بعض باخبر ذرائع کے مطابق کہا ہے کہ جنوبی کوریا کی ائل ریفائنریز نے جنوری کے آخر میں ایران سے تیل کی درآمدات کا دوبارہ آغاز کریں گی۔
رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق جنوبی کوریا کی ائل ریفائنریز سب سے بہتر قیمت کے ساتھ ایران سے تیل خریدنے سے متعلق معاہدہ طے کرنے کے درپے ہیں۔
اس کے علاوہ جاپان کی " فوجی" ائل ریفائنری نے بھی ایرانی تیل کے بڑے خریدار کے ناطے سے جنوری کے آخر میں ایران سے ال۔ این۔ جی گیس خریدنے کیلئے دلچسبی کا اظہار کیا ہے۔
واضح رہے کہ 2015 میں طے پانے والے ایران جوہری معاہدے کے بعد، جنوبی کوریا اور جاپان نے ایران سے تیل کی درآمدات میں کئی گنا اضافہ کردیا لیکن امریکہ کی جانب سے ایران پر دوبارہ پابندیاں لگانے کی بدولت 2018 میں ایران سے تیل کی خریداری کو کم کرنا پڑا۔
ای عرصے میں، امریکہ نے ایرانی تیل کی برآمدات کو صفر تک لانے کیلئے کئی بار جاپان اور جنوبی کوریا سے درخواست کی تھی کہ ایران سے تیل کی درآمدت کو ختم کردیں لیکن یہ ان دونون ممالک نے ایران مخالف امریکی پابندیوں سے چھوٹ ملنے کیلئے واشنکٹن کے ساتھ مذاکرات کا آغازکیا اور بلآخرامریکہ نے 2 نومبر کو اعلان کردیا تھا کہ ایران پر تیل پابندیوں کی تجدید کے باوجود عارضی طور پر 8 ملکوں کو ایران سےتیل خریدنے کی اجازت دی جائے گی جن میں جاپان اور جنوبی کوریا بھی شامل ہیں۔
9467*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@